کشمیری زبانوں کے حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کا انعقاد

کشمیری زبانوں کا حمدیہ و نعتیہ مشاعرہ

اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں آن لائن کشمیری زبانوں(کشمیری، گوجری، پہاڑی) کا حمدیہ نعتیہ مشاعرہ منعقد ہوا۔ مجلس صدار ت میں علامہ جواد جعفری (مظفر آباد) اور مخلص وجدانی(مظفر آباد) شامل تھے۔ ڈاکٹر مقصود جعفری (اسلام آباد) مہمان خصوصی تھے۔ ڈاکٹر صغیر خان (راولاکوٹ) اور کریم اللہ قریشی(مظفر آباد) مہمانان اعزاز تھے۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان، نے ابتدائیہ پیش کیا۔ نظامت پروفیسر اعجاز نعمانی نے کی۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین اکادمی نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کہاکہ کشمیری زبان میں حمد و نعت گوئی کی ابتدا سید علی ہمدانی کی کشمیر آوری سے منسوب ہے۔1372عیسوی میں آپ نے اپنے نعتیہ مجموعے ”چہل اسرار“(فارسی زبان میں تھااور چالیس غزلوں پر مشتمل تھا) سے کشمیریوں کو حب رسول اور حمد گوئی کی اہمیت سے روشناس کرایا۔ بعد میں تین کشمیری ادیبوں نے آپ کے اس فارسی مجوعہ کا کشمیری زبان میں بھی ترجمہ کیا۔ اس کے بعد شیخ نور الدین رشی کے کشمیری کلام ”شروکھ“ سے حمدو نعت گوئی کا سلسلہ کشمیر میں شروع ہوا۔ کشمیری حمد ونعت خواہوں نے اسے حمدیہ و نعتیہ کلام کے ذریعے اللہ تعالی اور رسول اکرم سے کشمیر سے خود ظلم ختم کر نےالتجا کی ہے۔ شیخ نورا لدین رشی کے بعد کشمیری حمد و نعت کہنے والوں کی ایک طویل فہرست ہے جن میں خواجہ حبیب اللہ نوشہروی، فاخر کشمیری، محمود گامی، قطب الدین واعظ، میر ثنا اللہ کریدی ، مقبول شاہ کرالہ واری، رشید نازکی، عاشق تدالی ، عبد الاحد نادم، عبد الوھاب پرے، میر غلام رسول ناز کی قابل ذکر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گوجری زبان کا تحریری سرمایہ زیادہ نہیں ہے۔ 1920کے بعد ریاست جموں و کشمیر میں گوجری زبان کے تحریر ی ادب کا آغاز ہوا ۔ جب تحریک حریت کشمیر نے زور پکڑا تو ریاست جموں و کشمیر کے گوجر اہل قلم نے گوجری زبان کو ذریعہ اظہار بنا کر اپنا کردار ادا کیا ۔ گوجری زبان میں حمدو نعت گوئی کی ابتداء1925سے ہوئی۔ گوجری حمدو نعت کے میدان میں قابل ذکر شعرا میں مولوی میر الدین قمر، مولونا محمد اسماعیل راجوری ، محمد اسرائیل مہجور، نسیم پونچھی، فتح علی سروری، ڈاکٹر غلام حسین اظہر، اقبال عظیم اور رانا فضل حسین شامل ہیں۔ چیئرمین اکادمی نے کہاکہ پہاڑوں، وادیوں اور ندیوں کے دیس میں بولی جانے والی زبان پہاڑی کہلاتی ہے ۔ اس زبان کی ابتدا و آغاز سے متعلق کسی دو ٹوک دور کا تعین نہیں کیا جا سکتا ہے۔ یہ قدیم زبان ہے جو ہزاروں سالوں سے بولی جاتی ہے۔ اشوک اعظم کے عہد میں بدھ مت کی ترویج و تبلیغ کے لیے پہاڑی زبان کو علمی زبان کے طور پر ترقی دی گئی۔ ریاست جموں و کشمیر میں پہاڑی کی پہلی بڑی کتاب میاں محمد بخش کی ”سیف الملوک“ ہے جو شامکھی رسم الخط میں لکھی گئی۔ پہاڑی زبان میں لوک گیتوں ، لوک کہانیوں کے ساتھ حمدو نعت کے حوالے سے بھی بے پناہ کام موجود ہے۔

انہوں نے مشاعرے کے تمام شعراءکا شکریہ ادا کیا کہ انہو ںنے اکادمی کی درخواست پر اس مشاعرے میں شرکت کی۔ مشاعرے میں غلام حسین بٹ(مظفر آباد)، محمد رفیق پروانہ(نیلم)، جاوید سحر(عباس پور)، عبد الرشید چوہدری (مظفر آباد)، منیر زاہد(عباس پور)، صفی ربانی(گڑھی حبیب اللہ)، شاہد شوق(مظفر آباد)، رفیق شاہد(عباس پور)، حنیف محمد(عباس پور)، حق نواز چودھری(عبا س پور)، توقیر گیلانی(کوٹلی)، حبیب الرحمن حبیب(مظفر آباد)، حمید کامران(راولاکوٹ)، ضیاءالرحمن(نیلم)، لیاقت لائق(راولاکوٹ) اور دیگر نے کشمیری زبانو ں(کشمیری، گوجری ، پہاڑی) میں حمدیہ و نعتیہ کلام پیش کیا۔


آن لائن کشمیری زبانوں کے مشاعرے کے شرکا

Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

Islamabad(P.R): In the blessed month of Ramadan-ul-Mubarak, an online Hamdiya & Naatiya Mushaira of Kashmiri languages (Kashmiri, Gojri, Pahari) was organized by the Pakistan Academy of Letters (PAL). The Presidium consisted of Allama Jawad Jafari (Muzaffarabad) and Mukhlis Wajjdani (Muzaffarabad). Dr. Maqsood Jafari (Islamabad) was the Chief Guest. Dr. Saghir Khan (Rawalkot) and Karimullah Qureshi (Muzaffarabad) were the guests of honor. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, gave the introductory speech. Prof. Ijaz Nomani was the moderator.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman PAL, while giving the introductory speech, said that the beginning of Hamad & Naat recitation in Kashmiri language is attributed to the arrival of Syed Ali Hamdani in Kashmir. In 1372, he introduced Kashmiris to the importance of Hub Rasool and Hamd Goi with his Naat collection “Chahal Israr” (in Persian and consisted on forty ghazals). Later, three Kashmiri writers also translated your Persian collection into Kashmiri. After this, a series of Hamd-o-Naat recitation started in Kashmir with the Kashmiri speech of Sheikh Noor-ud-Din Rishi. Kashmiri praisers and Naat seekers have appealed to Allah Almighty and the Holy Prophet (PBUH) to end oppression in Kashmir itself. After Sheikh Noor-ud-Din Rishi, there is a long list of Kashmiri Hamd and Naat reciters including Khawaja Habibullah Nowshehrawi, Fakhir Kashmiri, Mahmood Gami, Qutbuddin Waiz, Mir Sanaullah Kredi, Maqbool Shah Kerala Wari, Rashid Nazki, Ashiq Tadali. Notable are Abdul Ahad Nadeem, Abdul Wahab Pare and Mir Ghulam Rasool Naz.

He said that the written capital of Gojri language is not much. After 1920, Gojri language writing began in the state of Jammu and Kashmir. When the Hurriyat Kashmir movement gained momentum, the Gujar writers of the state of Jammu and Kashmir played their role by making the Gojri language the medium of expression. Hamd-o-Naat recitation in Gojri language started from 1925. Notable poets in the field of Gojri Hamdo Naat include Maulvi Mir-ud-Din Qamar, Maulana Muhammad Ismail Rajouri, Muhammad Israel Mahjoor, Naseem Poonchi, Fateh Ali Sarwari, Dr. Ghulam Hussain Azhar, Iqbal Azeem and Rana Fazal Hussain.

The chairman PAL, said that the language spoken in the land of mountains, valleys and rivers is called Pahari. No definite period can be determined for the origin of this language. It is an ancient language that has been spoken for thousands of years. During the reign of Ashoka the Great, the hill language was developed as a scholarly language for the promotion and spread of Buddhism. The first major book on the hill in the state of Jammu and Kashmir is Mian Muhammad Bakhsh’s Saif al-Muluk, written in the Shahmukhi script. There is a lot of work in the mountain language regarding folk songs, folk tales as well as Hamad-o-Naat.

He thanked all the poets for participating in this Mushaira at the request of the PAL.
Participants of the Mushaira included Ghulam Hussain Butt (Muzaffarabad), Muhammad Rafiq Parwana (Neelam), Javed Sehar (Abbaspur), Abdul Rasheed Chaudhry (Muzaffarabad), Munir Zahid (Abbaspur), Safi Rabbani (Garhi Habibullah), Shahid Shoq (Mushaira). Muzaffarabad), Rafiq Shahid (Abbaspur), Hanif Muhammad (Abbaspur), Haq Nawaz Chaudhry (Abbaspur), Tauqeer Gilani (Kotli), Habib-ur-Rehman Habib (Muzaffarabad), Hamid Kamran (Rawalkot), Zia-ur-Rehman (Neelam). ), Liaqat Laiq (Rawalkot) and others presented Hamadiya and Naatiya poetry in Kashmiri languages (Kashmiri, Gojri, Pahari).

Comments are closed.