پوٹھوہاری حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کا انعقاد

اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں آن لائن پوٹھوہاری حمدیہ ونعتیہ مشاعرہ منعقد ہوا۔مجلس صدار ت میں اختر عثمان(اسلام آباد)، شیراز طاہر(مندرہ)اور ثاقب امام رضوی (گوجر خان) شامل تھے۔ یاسر محمود کیانی(کلرسیداں)، شیراز اختر مغل(گوجر خان) اور شمسہ نورین(اسلام آباد) مہمانان خصوصی تھیں۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان، نے ابتدائیہ پیش کیا۔ نظامت نعمان رزاق اور ملک عبد الصبور نے کی۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین اکادمی نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کہاکہ سواں تہذیب کا شمار دنیا کی قدیم ترین تہذیبوں میں ہوتا ہے ۔ کئی تاریخ دانوں کے نزدیک قدیم ترین انسانی فوسلز اسی دریا کے کنارے دریافت ہوئے۔ اسی دریائے سواں کے کنارے آباد بستیوں کی زبان، پوٹھوہاری کے اس مشاعرے میں میں تمام شعراءکو خوش آمدید کہتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ آج ہم جس جگہ بیٹھے ہوئے ہیں ، اسلام آباد ،راولپنڈی، اٹک، چکوال، جہلم یہ علاقے اس زبان و ادب کے خزانے سے مالا مال ہے۔ دیگر پاکستان زبانوں کی طرح پوٹھوہاری میں بھی لوک ادب کی صدیوں پرانی روایت موجود ہے۔ تاہم تحریری طور پر دستاویز بیسویں صدی کی ابتدا ءسے دستیاب ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پوٹھوہاری میں پہلا شعر کس نے تحریر کیا یہ بات ابھی تحقیق طلب ہے تاہم پوٹھوہاری کے پہلے معروف شاعر ہونے کا شرف باقی صدیقی کو حاصل ہے جنہوں نے پوٹھوہاری کے ساتھ ساتھ اردو میں بھی شاعری کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ دیگر پاکستانی زبانوں کی طرح پوٹھوہاری میں بھی حمد و نعت کا آغاز لوک ادب کی صورت میں ہوا ۔ پوٹھوہاری چوں کہ لسانی اعتبار سے پنجابی ، سرائیکی اور ہندکو کے قریب ہے اس لیے ان کے لسانی و ادبی روابط بھی بہتر ہیں۔ پنجابی اور سرائیکی زبان کی قدیم شاعری کا مزاج صوفیانہ ہے۔ اسی صوفیانہ مزاج سے پوٹھوہاری شاعری نے بھی اپنے آپ کو رنگا۔ انہوں نے کہاکہ میاں محمد بخش نے چونکہ ایک ایسے علاقے میں زندگی بسر کی جہاں کی زبان پوٹھوہاری تھی اس لیے ان کی پنجابی شاعری پر پوٹھوہاری رنگ کے دلکش نمونے بھی نظر آتے ہیںاور ان کے ہاں نہ صرف یہ کہ صوفیانہ مزاج حاوی ہے بلکہ انہوں نے باقاعدہ حمدیں اور نعتیں بھی کہہ رکھی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ پوٹھوہاری کی مشہور سخن چاربیتہ گانے کا رواج صدیوں سے چلا آرہا ہے ۔ ستار اور گھڑے کی تال میل سے ترتیب دی گئی اس لوک صنف میں گلوکار ابتدا میں حمدیہ اور نعتیہ چاربیتہ ضرور پڑھتا تھا۔ انہوں نے کہا کہ بیسیوں صدی کی آخری تین دہائیوں میں پوٹھوہاری ادب کا زیادہ تر ارتقا ریڈیو پاکستان اور پی ٹی وی کی مرہون منت ہے ۔ اس دور میں زیادہ تر ادب نشر ہونے کے لیے ہی لکھا گیا ہے ۔ اس دور میں ریڈیو اور ٹی وی پر باقاعدہ حمدیہ اور نعتیہ مشاعرے ہوتے تھے انہی مشاعروں سے پوٹھوہاری میں حمدو نعت کی باقاعدہ داغ بیل ڈالی اور اس پلیٹ فارم سے پوٹھوہاری زبان و ادب سے تمام ادب دوستوں میں آج پوٹھوہاری کا شاید ہی کوئی ایسا مجموعہ ہو جس میں حمد و نعت موجود نہ ہوا۔ حمدیہ اور نعتیہ مشاعرے بھی اب تواتر سے منعقد ہونے لگے ہیں۔ اکادمی یہ مشاعرہ بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔ انہوں نے مشاعرے کے تمام شعراءکا شکریہ ادا کیا کہ انہو ں نے اکادمی کی درخواست پر اس مشاعرے میں شرکت کی۔ مشاعرے میں رحمن حفیظ (اسلام آباد)، جاوید احمد (کہوٹہ)، زمان اختر(سوہاوہ)، عبد الوحید قاسم (روات)، اشفاق ہاشمی(واہ کینٹ)، ظہور احمد نقی(راولپنڈی)، عابد حسین جنجوعہ(کلرسیداں)، الیاس بابر اعوان(اسلام آباد)، شاہد لطیف ہاشمی(سکھو)، فرید زاہد (گوجر خان)، غلام رضا شاکر(گوجر خان)، ذاکر محمود ذاکر(گوجر خان)، حسین امجد(اٹک)، محمد شریف شاد(راولپنڈی)، قمر عبداللہ(بھاٹہ)، اعجاز گوہر(واہ کینٹ)، فیصل عرفان(بھنکالی)، عامر حبیب(جہلم)، نزاکت علی مرزا(واہ کینٹ)، نوید اسلم(چکوال)، سلطان محمود چشتی(گوجر خان)، شکور حسن(گوجر خان)،یاسر محمود یابی(چونترہ) ، سجاد حیدر (دولتالہ) اور دیگر نے پوٹھوہاری زبان میں حمدیہ و نعتیہ کلام پیش کیا۔

آن لائن پوٹھوہاری حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کے شرکا

Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

Islamabad (P.R) In the blessed month of Ramadan-ul-Mubarak, an online Pothohari Hamdiya and Naatiya Mushaira was organized by the Pakistan Academy of Letters (PAL). The Presidium consisted of Akhtar Usman (Islamabad), Shiraz Tahir (Mandira) and Saqib Imam Rizvi (Gujar Khan). Yasir Mahmood Kayani (Kalrasidan), Shiraz Akhtar Mughal (Gujar Khan) and Shamsa Noorin (Islamabad) were the chief guests. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, gave the introductory speech. Noman Razzaq and Malik Abdul Saboor were the moderators.

In his introductory remarks, Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, said that Sawan Civilization is one of the oldest civilizations in the world. According to many historians, early human fossils were discovered along this river. I welcome all the poets in this Pothohari language Mushaira, which is the language of the settlements on the banks of the river Sawan.

He said that the place where we are sitting today, Islamabad, Rawalpindi, Attock, Chakwal, Jhelum, the area is rich in the treasure of language and literature. Pothohari, like other Pakistani languages, has a centuries-old tradition of folk literature. However, written documents have been available since the beginning of the twentieth century. He said that it is still a matter of research as to who wrote the first poem in Pothohari. However, Baqi Siddiqui has the honor of being the first well-known poet of Pothohari who has written poetry in Pothohari as well as in Urdu.

He said that like other Pakistani languages, Hamad and Naat in Pothohari also started in the form of folk literature. Since Pothohari is linguistically close to Punjabi, Seraiki and Hindko, their linguistic and literary connections are also better. The mood of ancient poetry in Punjabi and Seraiki is mystical. Pothohari poetry also painted itself with the same mystical temperament.

He said that since Mian Muhammad Bakhsh lived in an area where the language was Pothohari, his Punjabi poetry was also rich in Pothohari colors and not only did he have a mystical temperament but he also Regular hymns and naats are also recited.

He said that the tradition of Pothohari’s famous song Charbita has been going on for centuries. In this folk genre, which was arranged with the rhythm of a sattar and a pitcher, the singer used to recite Hamdiya and Naatiya Charbita in the beginning.

He said that most of the evolution of Pothohari literature in the last three decades of the twentieth century was due to Radio Pakistan and PTV. Most of the literature in this period was written for broadcasting only. In those days, there were regular Hamad and Naat recitations on radio and TV. From these recitations, regular Naat was sung in Pothohari. From this platform, there is hardly any collection of Pothohari among all literary friends from the Pothohari language and literature today. In which there was no Hamad and Naat. Hamdia and Naatiya mushairas are now being held regularly. PAL’s this Mushaira is also a link in the same chain. He thanked all the poets of the Pothohari Mushaira for participating in the Mushaira at the request of the PAL.

Participants of Mushaira included Rehman Hafeez (Islamabad), Javed Ahmed (Kahuta), Zaman Akhtar (Sohawa), Abdul Waheed Qasim (Rawat), Ashfaq Hashmi (Wah Cantt), Zahoor Ahmad Naqi (Rawalpindi), Abid Hussain Janjua (Kalrasidan), Ilyas Babar Awan (Islamabad), Shahid Latif Hashmi (Sukho), Farid Zahid (Gujar Khan), Ghulam Raza Shakir (Gujar Khan), Zakir Mahmood Zakir (Gujar Khan), Hussain Amjad (Attock), Muhammad Sharif Shad (Rawalpindi), Qamar Abdullah (Bhata), Ejaz Gohar (Wah Cantt), Faisal Irfan (Bhankali), Amir Habib (Jhelum), Nazakat Ali Mirza (Wah Cantt), Naveed Aslam (Chakwal), Sultan Mahmood Chishti (Gujar Khan), Shakur Ahsan ( Gujar Khan), Yasir Mahmood Yabi (Chontra), Sajjad Haider (Dawlatullah) and others presented Hamadiya and Naatiya poetry in Pothohari language.

Comments are closed.