شینا۔بلتی۔کھوار۔بروشسکی۔وخی(گلگت بلتستان کی زبانوں کا) حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کا انعقاد

اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں آن لائن شینا۔بلتی۔کھوار۔بروشسکی۔وخی(گلگت بلتستان کی زبانوں)کا حمدیہ و نعتیہ مشاعرہ منعقد ہوا۔مشاعرے کی صدارت یوسف حسین آبادی نے کی۔ شیرباز علی برچہ،محمد حسن حسرت اور محمد امین ضیا مہمانان خصوصی تھے۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین، اکادمی ادبیات پاکستان نے ابتدائیہ پیش کیا۔ نظامت احسان علی دانش نے کی۔ مشاعرے میں شعراء کرام نے گلگت بلتستان کی زبانوں میں حمدیہ و نعتیہ کلام پیش کیا۔ ڈاکٹر یوسف خشک چیئرمین اکادمی نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ گلگت بلتستا ن پاکستان کے شمالی علاقے میں ایک ایسے خطے کانام ہے، جہاں کی سربہ فلک بلند ترین چوٹیاں، لامحدود گلیشیئر، نیلگوں جھیلیں، خوبصورت آبشار، ندی نالے اور حسین وادیاں وطن عزیز کے لیے اللہ تبارک وتعالیٰ کی خصوصی انعامات و اکرامات ہیں۔ 28ہزار مربع کلومیٹر پرپھیلے اس خطے کو دو بڑے ریجن میں تقسیم کیا جاتا ہے۔ جو گلگت بلتستان سے موسوم ہے۔ گلگت ریجن میں، گلگت سمیت، ہنزہ، نگر، غذر، استور اور دیامیر کے علاقے شامل ہیں، جبکہ بلتستان میں سکردو سمیت گانچھے، کھرمنگ، شگر، روندو اور گلتری کے علاقے شامل ہیں۔گلگت بلتستان جس طرح جغرافیائی خدوخال میں متنوع ہے، ایسا ہی یہاں کی تہذیب و ثقافت اور زبان و ادب میں بھی گونا گونی دیکھی جاتی ہے۔ اس خطے میں بولی جانی والی پانچ زبانوں میں شینا، بلتی بروشسکی، وخی اور کھوار شامل ہیں۔انہوں نے کہا کہ یہ پانچوں خوبصورت زبانیں بھی پاکستان کی قومی زبانوں میں شامل ہیں۔ اکادمی ادبیات پاکستان نے رمضان المبارک میں جہاں ملک کے دیگر صوبوں کی زبانوں پر حمدیہ اور نعتیہ مشاعروں کا اہتمام کیا،وہاں اس خطے کی زبانوں کا ایک آن لائن مشاعرے کااہتمام کیا، جس میں اس خطے کے سرکردہ شعراء اپنی اپنی زبانوں میں رب العالمین اور رحمت العالمین کے حضور اپنے اپنے انداز میں نذرانہ عقیدت پیش کرینگے۔ چھٹی اور ساتویں ہجری میں یہاں شمع اسلام فروزاں ہوئی، تو عوات و اذکار اور درود وسلام کے تحائف پیش کرنے لگے۔ ابتدائی شاعری سے قبل یہاں فارسی کا چلن رہا اور محافل میں فارسی شعراء کے کلام پڑھنے کا رواج عام تھا۔ دھیرے دھیرے جب اس خطے میں علم کے چراغ روشن ہونے لگے، تو یہاں کے بعض باذوق حضرات نے اظہار عقیدت کے لیے نظم کا سہارا لیا، یوں حمد نعمت قصائد مرثیے اورنوحے تخلیق ہونے لگے۔میں تمام شعراء حضرات کا ممنون ہوں، کہ کوڈ-19کی مشکل صورتحال کے باوجود وہ اس مشاعرے میں شریک ہوئے۔مشاعرے میں عبدالخالق تاج(شینا)،اخون محمد حسین حکیم(بلتی)،اسماعیل ناشاد(بروشسکی)،جمشید دکھی(شینا)،یوسف کھسمن(بلتی)،میر احمد ریاض احمد دیوانی(وخی)، ذیشان مہدی(بلتی)، جاوید حیات کاکا خیل(کھوار) اور دیگر نے گلگت بلتستان کی زبانوں میں حمدیہ و نعتیہ کلام پیش کیا۔ٌٌٌ

Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

Islamabad (PR) Pakistan Academy of Letters(PAL) in the Holy month of Ramadan-ul-Mubarak an online Sheena-Balti-Khuwar-Broshiski-Wokhi (Gilgit-Baltistan languages) Hamdiya and Naatiya Mushaira was held. Yousaf Hussain Abadi presided over the poetry recital while Sherbaz Ali Barcha, Mohammad Hassan Hasrat and Mohammad Amin Zia were the chief guests.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL gave the introductory speech. Ehsan Ali Danish was the moderator. Poets recited Hamdiya & Naatiya poetry in the languages of Gilgit-Baltistan.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, said that Gilgit-Baltistan is a region in the northern part of Pakistan, which has the highest peaks, infinite glaciers, blue lakes, beautiful waterfalls, streams and beautiful valleys. There are special rewards and honors of Allah Almighty. Spread over 28,000 square kilometers, the region is divided into two major regions. Named after Gilgit-Baltistan. Gilgit region includes Hunza, Nagar, Ghizr, Astor and Diamer areas including Gilgit, while Baltistan includes Skardu, Ganchhe, Khurramang, Shigar, Rondo and Gultari areas. Just as Gilgit-Baltistan is geographically diverse, so is its culture, language and literature. The five languages spoken in the region include Sheena, Balti Broshiski, Wakhi and Khwar.

He said that these five beautiful languages are also among the national languages of Pakistan. During the holy month of Ramadan, PAL organized an online poetry recital in the languages of other provinces of the country, There PAL organized an online Mushaira of the languages of this region, in which the leading poets of this region will offer their devotion in their own language to the Allah Almighty and His Prophet Hazrat Muhammad (PBUH) in their own way. In the sixth and seventh Hijri, the candle of Islam was lit here, so they started offering gifts of Awat and Izkar and Durood and Salam.

He further said that before the early poetry, Persian was prevalent here and it was customary to recite the words of Persian poets at conferences. Gradually when the lights of knowledge began to shine in this region, so some of the people here resorted to poetry to express their devotion. I am thankful to all the poets for participating in this poetry despite the difficult situation of Covid-19. Poets presented their Hamdiya and Naatiya poetry in Gilgit Baltistan lanaguages included :Abdul Khaliq Taj (Sheena), Akhun Muhammad Hussain Hakeem (Balti), Ismail Nashad (Broshisky), Jamshid Dakhi (Sheena), Yusuf Khassman (Balti), Mir Ahmad Riaz Ahmad Diwani (Wakhi), Zeeshan Mehdi (Balti). Javed Hayat Kakakhel (Khowar) and others.

Comments are closed.