بلوچی عالمی حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کا انعقاد

اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں آن لائن بلوچی عالمی حمدیہ ونعتیہ مشاعرہ منعقد ہوا۔مجلس صدارت میںعلی بخش دشتیاری (ایران) ، میر عمر میر(پسنی )اور اسحا ق خاموش (کیچ )شامل تھے۔ حسن علی (کراچی ) اور فضل حیات (بحرین) مہمانان خصوصی تھے۔ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان نے،ابتدائیہ پیش کیا۔ نظامت ڈاکٹر ضیاءالرحمن بلوچ نے کی۔ مشاعرے میںملک بھر اور بیرون ملک سے شعراءکرام نے بلوچی میں حمدیہ و نعتیہ کلام پیش کیا۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین، اکادمی ادبیات پاکستان نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ بلوچی اد ب میں حمد اور نعت گوئی کی روایت زمانہ قدیم سے مروج ہے۔ بلوچی ادب کو چار ادوار میں تقسیم کیا جاتا ہے۔ بلوچی شاعری میں حمد و نعت گوئی کی روایت دور اول سے ہی نمایاں ہے۔ بلوچ قومی شجرہ نسب کی قدیم نظم کے ابتدائی اشعار ہی حمد و نعت اور منقبت سے شروع ہوتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ بلوچی شاعری کے رند دور میں بھی حمدیہ بلوچی اشعار کی روایت موجود ہے تاہم خوانین قلات کے دور میں ملاﺅں نے بلوچی شاعری میں حمد و نعت گوئی کی روایت کو مستحکم کیا۔ اس عہد کے کلاسیک رومانی شاعر جام درک کے کلام میں بھی حمدیہ اشعار پوری آ ب و تاب کے ساتھ موجود ہیں۔ انیسویں صدی میں ملا فاضل رند، توکلی مست ، علی محمد کھانٹِک سر فہرست ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 1947سے عہد حاضر تک حمد و نعت گوئی میں سب سے زیادہ پیش رفت ہوئی۔اس عہد کے حمد ونعت گو شعراءمیں بگٹی، دین محمد بزدار، مومن بزدار، باہو چنگوانی ، بشکیہ قیصرانی، بہادر ہانس قیصرانی، خیرو دھماں قیصرانی، حیدر لیغاری، نور بشک بزدار، غوث بخش ناصح بزدار، غلام قادر بزدار اور امن دوست بگٹی سر فہرست ہیں جنہوں نے کلاسیک انداز میںحمد و نعت گوئی کی روایت کو بام عروج تک پہنچایا۔ انہوں نے کہا کہ اسی عہد میں بلوچ شعرا ادباکے کلام کی تلاش و جستجو اوراشاعت کا سلسلہ شروع ہوا۔ ملا فاضل رِند کے حمدیہ ، نعتیہ اشعار اور دیگر نظموں کو بشیر احمد بلوچ نے 1968میں ”شب چراگ“ کے نام سے بلوچی اکیڈمی کوئٹہ سے شائع کرایا۔ علی محمد کھانٹک کی حمدیہ، نعتیہ اور دیگر نظموں کے حامل کلام کو ”چِگھاءگفتار“ کے نام سے 1968میں حاجی محمود مومن بزدار نے مرتب کر کے شائع کرایا۔ جواں سال بگٹی کے حمدیہ و نعتیہ کلام اور دیگر نظموں کو دو شعری مجموعوں”جوانسال“(مرتبہ : عطاءشاد1970)”جوانسال(مرتبہ : گلزار خان مری 1979)نے بلوچی اکیڈمی کوئٹہ سے شائع کرایا۔ انہوں نے کہا کہ جن بلوچ شعرانے اب تک کم و بیش حمدیہ و نعتیہ اشعار کہے ان میں ملا محمد بلوچ، ملا داد کریم، اللہ داد بلوچ، محتاج بن مرید، ملا عبدالرحمن میرانی، ملایا ر محمد، عبد الکریم ساجدی، ملا عبد الغنی، افغان مغیر، رستم خان زبیرانی، حسین بخش رند، برخوردار جطوئی، مینگل فقیر، مگسی شاعر، فقیر شیر جان، نو ر اللہ سمالانی ، صحبت خان بنگلزئی۔ بکھر شاعر، احمد خان، کریم بخش کہیری، پیر محمد بلوچ ، نجو شاعر اور قاسم بلوچ قابل ذکر ہیں ۔بلوچی عالمی حمدیہ و نعتیہ مشاعرہ میں شکور زاہد (کوئٹہ)، سلیم ہمراز(تربت) ، عاصم ظہیر(کوئٹہ )، قیوم سادگ (خاران)، اسلم تگرانی (گوادر)، بالاچ قادر(کوئٹہ )، زاہد ہ رئیس راجی (کراچی )، عندلیب گچکی (تمپ )، امیر بخش تنزیل (گوادر)اور دیگر نے بلوچی زبان میں حمدیہ و نعتیہ کلا م پیش کیا۔

Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

Islamabad: In the blessed month of Ramadan-ul-Mubarak, an online Balochi International Hamdiya and Naatiya Mushaira was organized by the Pakistan Academy of Letters (PAL). The Presidium consisted of Ali Bakhsh Dashtiari (Iran), Mir Omar Mir (Pasni) and Ishaq Khamosh (Catch). Hassan Ali (Karachi) and Fazal Hayat (Bahrain) were the chief guests. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, presented keynote address. Dr. Zia-ur-Rehman Baloch was the moderator. Poets from all over the country and abroad presented Hamdiya and Naatiya poetry in Balochi language.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, while presenting the introductory speech, said that the tradition of Hamad and Naat recitation has been prevalent in Balochi literature since ancient times. Balochi literature is divided into four periods. The tradition of recitation of Naat has been prominent in Balochi poetry since time immemorial. The earliest verses of the ancient poem of the Baloch national lineage begin with Hamad, Naat and Manqabat.

He said that there is a tradition of Hamdiya Balochi poetry even in the Rind period of Balochi poetry but in the period of Khawanin Kalat the mullahs strengthened the tradition of Hamad and Naat recitation in Balochi poetry. Hamdiya’s poems are also present in full swing in the words of Jam Darak, the classic romantic poet of this era.

He said that in the 19th century, Mullah Fazil Rind, Tawakali Mast, Ali Muhammad Khantik topped the list.

He further said that from 1947 to the present day, the most progress has been made in Hamad and Naat recitation. Bugti, Din Mohammad Bazdar, Momin Buzdar, Bahu Changwani, Bishkiya Qaisarani, Bahadur Hans Qaisarani, Khairo Dhamman Qaisarani, Haider Leghari, Noor Bishka Buzdar, Ghous Bakhsh Naseh Buzdar, Ghulam Qadir Buzdar and Aman Dost Bugti are among the poets of this era. There are lists who brought the tradition of Hamad and Naat recitation to its peak in the classical style.

He said that the search and publication of the words of Baloch poets and literature started in the same era. Mullah Fazil Rind’s Hamdiya, Natia poems and other poems were published by Bashir Ahmed Baloch in 1968 under the name “Shab Chirag” from Baloch Academy Quetta.

He said that Ali Mohammad Khantak’s Hamdiya, Naatiya and other poems were compiled and published by Haji Mahmood Momin Buzdar in 1968 under the name of “Chigha Ghaftar”.

Bugti’s Hamadiya and Naatiya Kalam and other poems were published by two collections of poetry, “Jawansal” (edited by Ata Shad 1970) & “Jawansal”(edited by Gulzar Khan Murree 1979) from the Baloch Academy, Quetta.

He said that among the Baloch poets who have so far recited more or less Hamad and Naat included: Mullah Muhammad Baloch, Mullah Dad Karim, Allah Dad Baloch, Mohtaj Bin Mureed, Mullah Abdul Rahman Mirani, Malayalam Muhammad, Abdul Karim Sajidi, Mullah Abdul Ghani , Afghan Mugheer, Rustam Khan Zubirani, Hussain Bakhsh Rind, Barkhordar Jatoi, Mengal Faqir, Magsi Poet, Faqir Sher Jan, Noorullah Samalani, Sohbat Khan Bangalzai. Notable poets are Ahmad Khan, Karim Bakhsh Kahiri, Pir Muhammad Baloch, Najo Shair and Qasim Baloch.

Shakoor Zahid (Quetta), Saleem Hamraz (Turbat), Asim Zaheer (Quetta), Qayyum Sadig (Kharan), Aslam Tigrani (Gwadar), Balach Qadir (Quetta), Zahida Raees Raji(Karachi), Andaleeb Gachki (Temp), Amir Bakhsh Tanzeel (Gwadar) and others presented Hamdiya and Naatiya poetry in Balochi International Hamdiya and Naatia Mushaira.

Comments are closed.