پشتو عالمی حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کا انعقاد

اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں آن لائن پشتو عالمی حمدیہ ونعتیہ مشاعرہ منعقد ہوا۔مجلس صدارت میںپروفیسر ڈاکٹر نصیب اللہ سیماب(کوئٹہ)، فیروز آفریدی(قطر)، ثمینہ قادر(پشاور)، اورممتاز اورکزئی(یو اے ای)شامل تھے۔ پروفیسر خلیل باور(کوئٹہ)، گوہر شناس (یو کے)، سیدہ حسینہ گل(مردان)اورلائق زادہ لائق(پشاور) مہمانان خصوصی تھے۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان ،نے ابتدائیہ پیش کیا۔ نظامت ڈاکٹر اباسین یوسفزئی نے کی۔ مشاعرے میںملک بھر اور بیرون ملک سے شعراءکرام نے پشتو میں حمدیہ و نعتیہ کلام پیش کیا۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین، اکادمی نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ پشتو ادب میں حمد گوئی کی روایت قدیم زمانے سے موجود ہے ۔ بعد میں کلاسیکی شعراءنے اپنے دواوین میں حمدیہ کلام کو شامل کر کے اس روایت کی پاسداری کی۔ 300ہجری میں بیٹ نیکہ پشتو کا قدیم شاعر تھا جس نے بہترین حمد لکھی۔ انہوں نے کہاکہ اس کے بعد روشنیہ تحریک کے روح رواں بایذید انصاری کے پیروکاروں جس میں ارزانی خویشکی، مرزا خان انصاری ، دولت موہانی ، واصل اور علی محمد مخلص نے حمد و نعت گوئی اور صوفیانی شاعری کی روایت کو استحکام بخشا۔ ان کے ہاں دواوین میں حمد گوئی اور وحدت الوجود کے نظریے کی تشریح و توضیح کے نمونے ملتے ہیں۔ خوشحال خان خٹک نے بھی شاعر ی میں حمد گوئی کی روایت کو برقرار رکھا۔ ان کے خاندان سے منسلک شعراءعبد القادر خان، اشرف خان اور کاظم خان شیدا و دیگر نے حمدو نعت گوئی کو فروغ دینے میں نمایاں کردار اداکیا۔ رحمن بابا بنیادی طور پر شاعر انسانیت اور صوفی شاعر تھے۔ انہوں نے تصوف اور مذہبی شاعری کو بھر پور توجہ دی ، ان کی شاعری میں حمد کے بہترین نمونے شامل ہیں۔ انہوں نے کہاکہ رحمن بابا کے ہم عصر دیگر کلاسیکی شعراءنے بھی حمد ونعت کو خصوصی توجہ دی ۔ 20ویں صدی میں پشتو کی حمدیہ و نعتیہ شاعری نے صحیح معنوں میں ترقی کی منزلیں طے کیں۔ اس دور میں الگ سے حمدیہ و نعتیہ کلام کے مجموعے شائع ہوے اور متفر ق شعری مجموعوں میں بھی حمدیہ و نعتیہ کلام شامل ہے۔چیئرمین اکادمی نے کہا کہ میں تمام معزز شعراءکا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ وہ کوڈ19کی پریشان کن صورتحال کے باوجود پشتوعالمی حمدیہ و نعتیہ مشاعرے میں شریک ہوئے ۔ مشاعرے میں کلثوم زیب (پشاور)، محمدحنیف قیس (سوات)، عزیز مانیروال (صوابی )، ڈاکٹر شاہدہ سردار(پشاور)، اقبال حسین افکار (اسلام آباد)، ڈاکٹر علی خیل دریاب(مالا کنڈ)، سید صابر شاہ صابر(پشاور )، پروفیسر عطاءالرحمان عطاء(شانگلہ )، ڈاکٹر طارق دانش (بنوں )، پروفیسر اقبال شاکر (مالاکنڈ)، پروفیسر نواز یوسفزئی (بونیر)، رضوان اللہ شمال (دیر پایاں)، پروفیسر رفیق یوسفزئی (کے ایس اے )اور دیگر نے پشتو زبان میں حمدیہ و نعتیہ کلا م پیش کیا۔

آن لائن پشتو عالمی حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کے شرکا

Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

Islamabad (P.R) In the Holy month of Ramadan-ul-Mubarak, an online Pashto International Hamdiya and Naatiya Mushaira was organized by the Pakistan Academy of Letters (PAL. The Presidium consisted of Prof. Dr. Naseebullah Simab (Quetta), Feroz Afridi (Qatar), Samina Qadir (Peshawar), and Mumtaz Orakzai (UAE). Prof. Khalil Bawar (Quetta), Gohar Shinas (UK), Syeda Hasina Gul (Mardan) and Laiqzada Laiq (Peshawar) were the chief guests. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, gave the introductory speech. Dr. Abasin Yousafzai was the moderator. Poets from all over the country and abroad presented Hamdiya and Naatiya poetry in Pashto.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, in his introductory remarks, said that the tradition of Hamdiya poetry has existed in Pashto literature since ancient times. Later, classical poets followed this tradition by incorporating Hamds in their poems. In 300 AH, Bait Naika was an ancient Pashto poet who wrote the best hymns. He said that after that the followers of Bayazid Ansari, the Roshania movement including Arzani Khushki, Mirza Khan Ansari, Daulat Mohani, Wasil and Ali Muhammad Mukhlis strengthened the tradition of praise and Naat recitation and Sufi poetry. In his Dawavain, there are examples of praising and interpreting the view of Wahdat-ul-Wujud.

He further said that Khushal Khan Khattak also maintained the tradition of Hamdiya poetry. Poets like Abdul Qadir Khan, Ashraf Khan, Kazim Khan Sheida and others associated with his family played a significant role in promoting Hamdiya & Naatiya recitation.

Chairman PAL, said that other classical poets of Rehman Baba’s time also paid special attention to Hamd &Naat. In the 20th century, Pashto Hamdiya and Naatiya poetry have truly reached the stage of development. Separate collections of Hamdiya and Naatiya poetry were published during this period, and various collections of poetry also include Hamdiya & Naatiya poetry.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL said that I thank all the esteemed poets for participating in the Pashto International Hamdiya and Naatiya Mushaira despite the disturbing situation of Covid19.

Kulsoom Zeb (Peshawar), Mohammad Hanif Qais (Swat), Aziz Manirwal (Swabi), Dr. Shahida Sardar (Peshawar), Iqbal Hussain Afkar (Islamabad), Dr. Ali Khel Daryab (Malakand), Syed Sabir Shah Sabir (Peshawar), Prof. Ata-ur-Rehman Ata (Shangla), Dr. Tariq Danish (Bannu), Prof. Iqbal Shakir (Malakand), Prof. Nawaz Yousafzai (Buner), Rizwanullah Shamal (Deerpayan), Prof. Rafiq Yousafzai (KSA) and others presented Hamdiya and Naatiya poetry in Pashto language.

Comments are closed.