آن لائن حضرت سچل سرمستؒ کانفرنس کا انعقاد

اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیات پاکستان کے زیر اہتمام حضرت سچل سرمستؒ کے دو سوسالہ عرس کے موقع پر ”آ ن لائن سچل سرمستؒ کانفرنس“ منعقد ہوئی۔ سید آصف حیدر شاہ، وفاقی سیکرٹری، قومی ورثہ و ثقافت ڈویژن، مہمان خصوصی تھے۔ مجلس صدارت میں ایاز گل(سندھ)، ڈاکٹر اختر شمار(پنجاب)، نور خان محمد حسنی(بلوچستان) اور فقیرا خان فخری(خیبر پختونخوا) شامل تھے۔محمد عمر چنڈ(نیوزی لینڈ)، تاج جویو(حیدر آباد)، پروفیسر کے ایس ناگپال(کراچی)، ڈاکٹر مجاہد بلوچ(ڈیرہ غازی خان) اور ڈاکٹر عبد الغفور میمن(کراچی ) مہمانان اعزاز تھے۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان نے ابتدائیہ پیش کیا۔ اختر درگاہی(روہڑی)، چندر کیسوانی(کراچی)، ڈاکٹر مہر خادم(سکھر)، ممتاز بخاری(سکھر)، ابراہیم کھرل(خیر پور)، ڈاکٹر شیر مہرانی(کراچی) اور دیگر نے حضرت سچل سرمستؒ کے حوالے سے مقالات پیش کیے۔ نظامت ڈاکٹر حاکم علی برڑو (اسلام آباد) اور امر اقبال(خیرپور) نے کی۔ سید آصف حیدر شاہ، وفاقی سیکرٹری ، قومی ورثہ و ثقافت ڈویژن، نے کہا کہ سچل سرمستؒ نے اپنی شاعری کے ذریعے انسانیت کا درس دیا ۔ وہ انسانوں سے محبت کے روادار تھے۔ اُن کی شاعری ، محبت، امن و آشتی اور رواداری کا پیغام دیتی ہے۔ وہ شاہ عبد اللطیف بھٹائیؒ کے پیرو کار تھے۔ وہ اعلیٰ انسانی اقدار کا احیاءچاہتے تھے۔ انہوں نے تمام معزز شرکاءکا شکریہ اداکرتے ہوئے کوڈ19کے باوجود اس کانفرس کے انعقاد کو اکادمی کا بہتر عمل قرار دیا۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیا ت پاکستان نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ سچل سرمستؒ کی شاعری کا اہم حوالہ فلسفہ وحدت الوجود کا ہے جو اُن کے کلام کا محور ہے۔ سچل سائیں انسانیت کے شاعر تھے اُن کی شاعری میں یہی ہے کہ خدا کو پانے کے لیے انسانوں سے محبت اوراُن سے بھلائی ضروری ہے۔ اُن کا کلام آنے والی نسلوں کے لیے مشعل راہ ہے۔ چیئرمین اکادمی ڈاکٹر یوسف خشک نے کہا کہ کوڈ19کی مشکل صورتحال کے باوجود میں وفاقی سیکرٹری برائے قومی ورثہ و ثقافت اور تمام مقالہ نگاروں کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ وہ سچل سرمستؒ جیسے عظیم شاعر کو خراج تحسین پیش کرنے کے لیے شریک ہوئے ۔ مقررین نے حضرت سچل سرمستؒ کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ سچل سرمستؒ وسیع النظر انسا ن تھے۔ اُ ن کی شاعری میں انسان کی عظمت کو بنیادی حیثیت حاصل ہے۔ انہوں نے تنگ نظری ، ذات پات اور زبان رنگ و نسل کی نفی کی۔ انہوں نے غلامی اور غلامانہ سوچ کو رد کیا۔ اُن کی شاعری سے مذہبی رواداری اصل میں انسان دوستی ہے۔ مقررین نے کہاکہ سچل سرمستؒ معاشرے میں امن کا فروغ چاہتے تھے بلا شبہ وہ شاعر انسانیت تھے۔


Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

An “Online Sachal Sarmast Conference”

Islamabad (P.R) An “Online Sachal Sarmast Conference” was organized by the Pakistan Academy of Letters (PAL) on the occasion of the bicentennial of Hazrat Sachal Sarmast. Syed Asif Haider Shah, Federal Secretary, National Heritage and Culture Division was the Chief Guest. The Presidium consisted of Ayaz Gul (Sindh), Dr. Akhtar Shamar (Punjab), Noor Khan Muhammad Hasani (Balochistan) and Faqira Khan Fakhri (Khyber Pakhtunkhwa). Muhammad Umar Chand (New Zealand), Taj Joyo (Hyderabad), Prof. KS Nagpal (Karachi), Dr. Mujahid Baloch (Dera Ghazi Khan) and Dr. Abdul Ghafoor Memon (Karachi) were the guests of honor. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL gave the introductory speech. Akhtar Dargahi (Rohri), Chandar Keswani (Karachi), Dr. Mehr Khadim (Sukkur), Mumtaz Bukhari (Sukkur), Ibrahim Kharal (Khairpur), Dr. Sher Mehrani (Karachi) and others presented articles on Hazrat Sachal Sarmast. Dr. Hakim Ali Bardo (Islamabad) and Amar Iqbal (Khairpur) were the moderator.

Syed Asif Haider Shah, Federal Secretary, National Heritage and Culture Division, said that Sachal Sarmast taught humanity through his poetry. He was tolerant of human love. His poetry conveys the message of love, peace and tolerance. He was a follower of Shah Abdul Latif Bhittai. He wanted a revival of high human values. He thanked all the esteemed participants and termed the holding of this conference as a good practice of the PAL in spite of Covid-19.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, while giving an introductory speech, said that the main reference of Sachal Sarmast’s poetry is the philosophy of Wahdat-ul-Wujud which is the axis of his speech. Sachal Saeen was a poet of humanity. In his poetry, it is said that in order to find God, it is necessary to love human beings and do good to them. His Word is a beacon for generations to come. Chairman PAL Dr. Yousuf Khushk said that despite the difficult situation of Covid-19, I thank the Federal Secretary for National Heritage and Culture and all the essayists for participating in paying homage to the great poet like Sachal Sarmast.

The speakers paid homage to Hazrat Sachal Sarmast and said that Sachal Sarmast was a broad-minded man. In his poetry the greatness of a man is central. He denied narrow-mindedness, caste and language, color and race. He rejected slavery and slavish thinking. From his poetry, religious tolerance is actually humanitarian. The speakers said that Sachal Sarmast wanted to promote peace in society. Undoubtedly, he was a poet of humanity.

Comments are closed.