سرائیکی حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کا انعقاد


اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں آن لائن سرائیکی حمدیہ ونعتیہ مشاعرہ منعقد ہوا۔ صدارت ڈاکٹرقاضی عابد(ملتان ) نے کی۔ کوثر ثمرین (ملتان )مہمان خصوصی تھیں۔ شاکر شجاع آبادی (ملتان) مہمان اعزازتھے۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان نے ابتدائیہ پیش کیا۔ نظامت ڈاکٹر سعدیہ کمال نے کی۔ مشاعرے میں ملک بھر سے شعراءکرام نے سرائیکی میں حمدیہ و نعتیہ کلام پیش کیا۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین اکادمی نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ سرائیکی کی جتنی پرانی کہانیاں اور لو ک قصے ہیں سب کے آغاز میں دعا کی روایت ملتی ہے۔ حضر ت سچل سرمست ، حمل خان لغاری جیسے شعراءکے ہاں سرائیکی کلام میں جدید نعت کے خدوخال دکھائی دیتے ہیں۔ خیر شاہ تونسوی، امام دین ہزاروی، فیض مشہدی اور فقیر محمد عار ف سے ہوتے ہوئے خلیفہ یار محمد ملتانی ، غلام قادر ملتانی، منشی محمد بخش، فائق ملتانی، منشی محمد رمضان تک سرائیکی نعت کا سفر کسی نہ کسی شکل میں جاری رہا ۔ اس دوران سرائیکی شاعرات بھی کسی سے پیچھے نہیں رہیں۔ اس سلسلے میں جیون خاتون کی نعتیہ شاعری بہترین مثال ہے۔ حضر ت خواجہ غلام فرید کی حضور کی یاد اور مدح میں لکھی گئی کافیاں بھی سرائیکی نعتیہ ادب کا حصہ ہیں۔ مولانا نور احمد فرید آبادی کے علاوہ محمد یار بلبل فریدی کی شاعری سرائیکی نعت نگاری میں ایک زریں دور کی نشاندہی کرتی ہے ۔ اسی طرح محمد رمضان طالب ، محمد مصطفی اور میاں مشتاق نے بے مثال نعتیں لکھیں۔ انہوں نے کہا کہ انیسویں صدی میں خواجہ غلام فرید نے سرائیکی زبان میں اللہ کی وحدانیت اور حضور کی پیروی جیسے آفاقی پیغام کو اپنی شاعری کے ذریعے لوگوں تک پہنچایا۔ اُن کی شاعری ، محبت ، امن اور رواداری کا درس دیتی ہے ۔ سرائیکی زبان کی اس روایت کو بعد کے جدید شعراءنے مزید انفرادیت اور وسعت دی ۔ سرائیکی شعر و ادب بھی مذہبی عقائدو رجحانات کے زیر اثر رہا ہے۔ چیئرمین اکادمی نے کہا کہ سرائیکی شاعری میں حمد و نعت گوی کو خاص اہمیت حاصل ہے۔ سرائیکی زبان نعت نگاری کے قیمتی سرمائے سے بھری پڑی ہے۔ میں تمام شعراءکا ممنوں ہوں کہ کوڈ19کے مشکل حالات کے باوجود وہ اس حمدیہ و نعتیہ مشاعرے میں شریک ہوئے ۔ مشاعرے میں وفا چشتی (اسلام آباد)،امان اللہ ارشد(رحیم یار خان)،محمد ساجد درانی قادری(احمد پور شرقیہ)،سعید ثروت(رحیم یار خان)،رضوانہ تبسم درانی (ملتان)،خورشید ربانی (ڈیرہ اسماعیل خان)،غیور بخاری(بہاول پور)، منظور سیال (مظفر گڑھ)،عمران میر(ڈیرہ غازی خان) ، حنا اقبال اور دیگر نے سرائیکی زبان میں حمدیہ و نعتیہ کلا م پیش کیا۔

Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

Islamabad: In the Holy month of Ramadan-ul-Mubarak, an online Seraiki Hamdiya and Naatiya Mushaira was organized by the Pakistan Academy of Letters (PAL). Mushaira presided over by Dr. Qazi Abid (Multan). Kausar Samreen (Multan) was chief guest while Shakir Shujaabadi (Multan) was the guest of honor. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL gave the introductory speech. Dr. Sadia Kamal was the moderator. Poets from all over the country recited Hamdiya & Naatiya poetry in Seraiki. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, while giving the introductory speech, said that there is a tradition of prayer at the beginning of all the old stories and folk tales of Seraiki. Poets like Hazrat Sachal Sarmast, Hamal Khan Leghari have the features of modern Naat in Seraiki Literature. The journey of Seraiki Naat continued in one form or another through Khair Shah Tunsui, Imam Din Hazarawi, Faiz Mashhadi and Faqir Muhammad Arif to Khalifa Yar Muhammad Multani, Ghulam Qadir Multani, Munshi Muhammad Bakhsh, Faiq Multani, Munshi Muhammad Ramzan. During this time, Seraiki poetess did not lag behind anyone.

The Naatiya poetry of Jeevan Khatun is the best example in this regard. Kafian written in memory and praise of Hazrat Muhammad(PBUH) by Hazrat Khawaja Ghulam Farid are also a part of Seraiki Naatiya literature Apart from Maulana Noor Ahmad Faridabadi, the poetry of Muhammad Yar Bulbul Faridi marks a golden age in Seraiki Naat writing. Similarly, Muhammad Ramzan Talib, Muhammad Mustafa and Mian Mushtaq wrote unparalleled Naats.
Chairman PAL, Dr. Yousuf Khushk said that in the nineteenth century, Khawaja Ghulam Farid conveyed to the people the universal message in the Seraiki language, such as the oneness of God and following the Holy Prophet (PBUH), through his poetry. His poetry teaches love, peace and tolerance. This tradition of the Seraiki language was further enhanced by the later modern poets. Seraiki’s poetry and literature have also been influenced by religious beliefs and trends. Chairman PAL said that Hamad and Naat’s recitation is of special importance in Seraiki poetry. The Seraiki language is full of valuable Naat writings. I am thankful to all the poets that despite the difficult circumstances of Covid-19, they participated in this Hamdiya & Naatiya Mushaira.

Participants of Mushaira included Wafa Chishti (Islamabad), Amanullah Arshad (Rahim Yar Khan), Muhammad Sajid Durrani Qadri (Ahmadpur Sharqiya), Saeed Tharwat (Rahim Yar Khan), Rizwana Tabassum Durrani (Multan), Khurshid Rabbani (Dera Ismail Khan), Ghayyur Bukhari (Bahawalpur), Manzoor Sial (Muzaffargarh), Imran Mir (Dera Ghazi Khan),Hina Iqbal and others presented Hamdiya and Naatiya poetry in the Seraiki language.

Comments are closed.