ڈاکٹر رشید امجد کے انتقال پر ڈاکٹر یوسف خشک ، چیئرمین اکادمی کا اظہار تعزیت


اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئرمین ڈاکٹر یوسف خشک نے معروف افسانہ نگار، نقاداور ماہر تعلیم ڈاکٹر رشید امجد کے انتقال پر گہرے دکھ کا اظہار کیا ہے۔انہوں نے اپنے تعزیتی پیغام میں کہا کہ ڈاکٹر رشید امجد ایک سیلف میڈ انسان تھے انہوں نے محنت، ذہانت اور مسلسل ریاضت سے اپنے معاصر لکھنے والوں میں ممتاز مقام حاصل کیا۔ بحیثیت افسانہ نگار اور نقاد وہ ادبی منظرنامے میں سب سے نمایاں رہے۔ رشید امجد ایک انتہائی سرگرم اور فعال ادبی شخصیت کے مالک تھے۔ 1960کی دہائی کے بعدافسانے میں موضوعاتی اور اسلوب کی سطح پر تبدیلی کے اثرات اُن کے افسانوں میں محسوس کیے جا سکتے ہیں۔ اُن کے درجن بھر سے زائد افسانوی مجموعے شائع ہو چکے ہیں جن میں’بیزار آدم کے بیٹے‘،’ ریت پر گرفت‘، ’دشت خواب‘،’ عام آدمی کے خواب‘،’ سہ پہر کی خزاں‘ قابل ذکر ہیں جبکہ اُن کی تحقیق اور تنقید کی کتب میں ’نیا ادب‘،’ شاعری کی سیاسی و فکری روایت ‘،’ میرا جی شخصیت اور فن‘ اور’ پاکستانی اردو ادب‘(رویےاور رجحانات)نمایاں ہیں۔ اُ ن کی یادداشتوں پر مشتمل تصنیف’ تمنابے تاب‘ کو بھی ادبی حلقوں میں سراہا گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ڈاکٹر رشید امجد کے انتقال سے اردو ادب ایک اہم لکھنے والے سے محروم ہوگیا ہے۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان نے دعا کی کہ اللہ تعالیٰ مرحوم کو جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور پس ماندگان کو صبرِ جمیل عطا فرمائے۔


Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL extends condolences on the demise of Dr. Rashid Amjad

Islamabad (P.R): Dr. Yousuf Khushk, Chairman, Pakistan Academy of Letters (PAL) has expressed deep sorrow over the demise of renowned novelist, critic and educationist Dr. Rashid Amjad. He said in his condolence message that Dr Rashid Amjad was a self-made man. He achieved prominence among his contemporary writers through hard work, intelligence and constant practice. As a novelist and critic, he was one of the most prominent figures in the literary scene.

He said that Rashid Amjad was a very active and literary personality. The effects of thematic and stylistic changes in fiction since the 1960s can be felt in his fiction. More than a dozen of his legendary collections have been published. Notable among them are “Bezar Adam Ke Batay”, “Rait Par Grift”, “Dasht-e-Khawab”, “Aam Adami Ke Khawab”, “Sa Pahar Ki Khizaan” while his research and critic books include “ Naya Adab”, “Shairy ki Siyasi-o-Fikri Rawait”, “Meeran Ji Shakhsiyat aur Fun” and “Pakistani Urdu Adab(Rawaiye aur Rujhanaat) are prominent. His memoirs “Tamana-be-Tab” have also been praised in literary circles.

He said that with the demise of Dr. Rashid Amjad, Urdu literature has lost an important writer.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, prayed that Allah Almighty grant the deceased a high position in Paradise and grant patience to those who are left behind.

Comments are closed.