میر گل خان نصیر قومی ادبی سیمینار کا انعقاد

میر گل خان نصیر کا ادبی سرمایہ نہ صرف بلوچی زبان کابلکہ پاکستانی ادب کے لیے بڑا اثاثہ ہے۔ افتخارعارف

میر گل خان نصیر کی شخصیت ایک گلدستہ کی مانند تھی۔ پروفیسر ڈاکٹر بدل خان

بلاشبہ میر گل خان نصیر بلوچی زبان کے بڑے شاعر ہیں۔ تاج جویو

میر گل خان نصیر نے احترام آدمیت کے موضوعات کو اپنی شاعری کے ذریعے عام کیا ۔ چیئرمین اکادمی


اکادمی کے زیراہتمام آن لائن میر گل خان نصیر قومی ادبی سیمینار میں ڈاکٹر ضیا الرحمن بلوچ، ڈاکٹر یوسف خشک، افتخا رعارف، ڈاکٹر واحد بخش بزدار اور ڈاکٹرعبد اللہ جان عابد اسٹیج پر بیٹھے ہیں

اکادمی کے زیراہتمام آن لائن میر گل خان نصیر قومی ادبی سیمینار میں ڈاکٹر ضیا الرحمن بلوچ، ڈاکٹر یوسف خشک، افتخا رعارف، ڈاکٹر واحد بخش بزدار اور ڈاکٹرعبد اللہ جان عابد اسٹیج پر بیٹھے ہیں

اسلام آباد(پ۔ر) اکادمی ادبیات پاکستان کے زیر اہتمام بلو چی کے نامورترقی پسند شاعر، محقق، مورخ اور دانشور میر گل خان نصیر کی 37ویں برسی کی مناسبت سے منعقدہ آن لائن میر گل خان نصیر قومی ادبی سیمینارمنعقد ہوا۔ مجلس صدارت میں افتخار عارف اور پروفیسر ڈاکٹر بدل خان شامل تھے۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان نے ابتدائیہ پیش کیا۔ تاج جویو اور احمد سلیم مہمانان خاص تھے۔ ڈاکٹر واحد بخش بزدار، ڈاکٹر عبد الصبور بلوچ اور ڈاکٹر عبد اللہ جان عابد مہمانان اعزاز تھے۔ ڈاکٹر رحیم بخش مہر، ڈاکٹر لیاقت سنی ،یار جان بادینی، ڈاکٹر رمضان بامری اور طارق رحیم بلوچ نے اظہار خیال کیا۔ نظامت ڈاکٹر ضیاءالرحمن بلوچ نے کی۔ اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئرمین ڈاکٹر یوسف خشک نے استقبالیہ کلمات ادا کرتے ہوئے کہا کہ

میر گل خان نصیرایک ہمہ جہت تخلیق کارتھے۔ وہ قادر الکلام شاعر، ادیب، مورخ، سیاستدان، صحافی اور ممتاز ماہر تعلیم تھے۔میر گل خان نصیر نے حب الوطنی شعور و آگہی اور احترام آدمیت کے موضوعات کو اپنے شعری حسن اور موثراظہار کے ذریعے قاری تک پہنچایا۔ ان تمام شعبوں میں اُن کا کردار سب سے نمایاں رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میر گل خان نصیر نے بلوچ قوم کو اپنی تعلیم کی طرف راغب کیا۔انہوں نے انسانی اقدار کی پاسداری اور مظلوم مزدور وں اور کسان بلوچوں کے لیے اپنی زندگی صرف کی۔ ڈاکٹر یوسف خشک نے کہاکہ میر گل خان نصیر ایک روشن خیال ترقی پسند ادیب تھے۔چیئرمین اکادمی نے کہا کہ میر گل خان نصیر نے فیض احمدفیض کے شعری مجموعہ سرِ وادی سیناکا بلوچی منظو م ترجمہ سینائی کیجک کے عنوان سے کیا جو اہمیت کا حامل ہے۔بلند افکار کی شاعری کی وجہ سے انہیں ملک الشعراءکا خطاب بھی ملا۔ انہوں نے کہاکہ میر گل خان نصیر کا ادبی سرمایہ بلوچستان کی تاریخ و ادب کا انتہائی قیمتی اثاثہ ہے۔

صدارتی خطاب کرتے ہوئے افتخا ر عارف نے کہا کہ میر گل خان نصیر کا ادبی سرمایہ نہ صرف بلوچی زبان کا بلکہ پاکستانی ادب کے لیے بڑا اثاثہ ہے۔ انہوں نے کہاکہ بلوچی شعر و ادب کا کوئی تذکرہ میر گل خان نصیر کے بغیر نامکمل ہے۔ فیض احمد فیض، شیخ ایازاور اجمل خٹک کی طرح میر گل خان نصیر بلوچی زبان کے ممتاز ترین شاعر، دانشوراور سیاستدان تھے۔ انہوں نے ساری زندگی ایک خاص مشن کے طور پر گزاری جو آنے والی نسلوں کے لیے مشعل راہ ہے۔پروفیسر ڈاکٹر بدل خان نے کہا کہ میر گل خان نصیر ہمہ گیر شخصیت کے مالک تھے۔ وہ ایک گل دستہ کی مانند تھے۔ وہ بنیادی طور پر شاعر تھے۔ ان کی شاعری میں عوامی اور انقلابی رنگ نمایاں ہے۔ انہوں نے بلوچی زبان اور شعر و ادب کے ساتھ بلوچی لوک ادب اور تاریخ پر کام کیا۔تاج جویونے کہا کہ میر گل خان نصیر بلوچی زبان کے بڑے تخلیق کار ہیں۔ وہ سندھی زبان کے شاعر شیخ ایاز اور پشتو شاعر اجمل خٹک کی طرح اپنی قوم کے نمائندہ شاعر ہیں۔ اُن کے لہجے میں گن گرج کا عنصر نمایاں ہے۔ اُن کی شاعری میں رومان کی جگہ رزمیہ انداز اسی وجہ سے ہے کہ سار ی زندگی اس نے اپنی قوم کے لیے جنگ و جدل میں گزاری۔ احمد سلیم نے کہاکہ میر گل خان نصیر ، شاعر، ادیب، مترجم، صحافی مورخ اور سیاستدان تھے۔ وہ بلوچی زبان کے بہت بڑے شاعر تھے اور یہی ان کی بڑی شناخت ہے۔ڈاکٹر واحد بخش بزدارنے کہا کہ میر گل خان نصیر ہمہ جہت لکھاری تھے ۔ وہ شاعر، ادیب، محقق، مورخ اور سیاستدان اور انسان دوست شخص تھے۔ انہوں نے کہا کہ بلوچستان کے علمی اور سیاسی تحریکوں میں میر گل خان نصیر اور یوسف مگسی پیش پیش رہے انہوں نے محکوم بلوچی قوم کو قبائلی جبر کے نظام سے آزاد کیا۔ ڈاکٹر عبد الصبور بلوچ نے کہا کہ میر گل خان نصیر فکری طور پر فیض ،شیخ ایاز اور اجمل خٹک سے جڑے تھے۔ اُنہوں نے بلوچی زبان و ادب کے لیے کام کیا۔ وہ ہمہ جہت تخلیق کار تھے۔ اُن کی اصل شناخت شاعر کی ہے۔ ہمیں میر گل خان نصیر کے افکار اور تعلیمات سمجھنے اور اس پر عمل پیرا ہونے کی ضرورت ہے۔ڈاکٹر عبد اللہ جان عابدنے کہا کہ میر گل خان نصیر کی شاعری کا خوشگوار پہلو یہ بھی ہے کہ انہوں نے پختونخواہ چارسدہ سے اپنی شاعری کا آغاز کیا۔ میرگل خا ن نصیر، شیخ ایاز اور ہمارے پشتو کے نامور شاعر اجمل خٹک اور قلندر مومند نے اپنے مظلوم اور محکوم طبقوں کےلیے نہ صرف شاعری کی صورت بلکہ عملی طور پر جدوجہدکی۔ ان تمام شعرا میں قربت تھی اور ایک ہی مشن تھا۔ڈاکٹر رحیم بخش مہر، ڈاکٹر لیاقت سنی ،یار جان بادینی، ڈاکٹر رمضان بامری اور طارق رحیم بلوچ نے میر گل خان نصیر کو شاندار الفاظ میں خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ میر گل خان نصیر نے جہد ِمسلسل اور انقلاب کی شاعری کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ میر گل خان نصیر نہ صرف پاکستان کے شاعر
تھے بلکہ وہ پوری دنیا کے مظلوموں کے شاعر تھے۔

Mir Gul Khan Naseer’s literary capital is a great asset not only to the Balochi language but also to Pakistani literature. Iftikhar Arif

Mir Gul Khan Naseer’s personality was like a bouquet. Prof. Dr. Badal Khan

Undoubtedly, Mir Gul Khan Naseer is a great poet of Balochi language. Taj Joyo

Mir Gul Khan Naseer popularized the themes of respect for humanity through his poetry. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL.

An online Mir Gul Khan Naseer National Literary Seminar

Islamabad (P.R): An online Mir Gul Khan Naseer National Literary Seminar was organized by the Pakistan Academy of Letters (PAL) on the occasion of the 37th anniversary of Mir Gul Khan Naseer, the renowned progressive poet, researcher, historian and intellectual of the Balochi language. The Presidium consisted of Iftikhar Arif and Prof. Dr. Badal Khan. Taj Joyo and Ahmed Saleem were special guests while Dr. Wahid Bakhsh Buzdar, Dr. Abdul Saboor Baloch, and Dr. Abdullah Jan Abid were the guests of honor. Dr. Yousuf Khushk, Chairman PAL gave the introductory speech. Dr. Rahim Bakhsh Mehr, Dr. Liaqat Sunni, Yar Jan Badeni, Dr. Ramzan Bamarri, and Tariq Rahim Baloch expressed their views. Dr. Zia-ur-Rehman Baloch was the moderator.

Dr Yousuf Khushk, Chairman, PAL, while delivering the welcome address said that Mir Gul Khan Naseer was a multi-faceted creator. He was a poet, writer, historian, politician, journalist and eminent educator. Mir Gul Khan Naseer conveyed the themes of patriotism, awareness and respect for humanity to the reader through his poetic beauty and effective expression. His role has been most prominent in all these fields.

The Chairman, PAL said that the literary capital of Mir Gul Khan Naseer is a very valuable asset of the history and literature of Baluchistan. He also received the title of Malik al-Shu’ara because of his high-minded poetry. Chairman PAL, Dr Yousuf Khushk said that Mir Gul Khan Naseer’s spirit of love for the Baloch nation has reached people all over the world. Undoubtedly, Mir Gul Khan Naseer was a universal creator.

In his presidential address, Iftikhar Arif said that Mir Gul Khan Naseer’s literary capital is a great asset not only to the Balochi language but also to Pakistani literature. He said that any mention of Baloch poetry and literature is incomplete without Mir Gul Khan Naseer. Mir Gul Khan Naseer was the most prominent poet, intellectual and politician of the Balochi language like Faiz Ahmad Faiz, Sheikh Ayaz and Ajmal Khattak. He spent his whole life on a special mission that is a beacon for generations to come.

Prof. Dr. Badal Khan said that Mir Gul Khan Naseer was a universal personality. They were like a bouquet. He was primarily a poet. Public and revolutionary colors are prominent in his poetry. He worked on Balochi language and poetry as well as Balochi folk literature and history.

Taj Joyo said that Mir Gul Khan Naseer is an elder of the Balochi language. He is a representative poet of his nation like Sindhi poet Sheikh Ayaz and Pashto poet Ajmal Khattak. There is an element of thunder in his tone. The epic style of his poetry is due to the fact that he spent his entire life fighting for his nation. Undoubtedly, Mir Gul Khan Naseer is a great poet of the Balochi.

Ahmed Saleem said that Mir Gul Khan Naseer was a poet, writer, translator, journalist, historian, and politician. He was a great poet of the Balochi language and this was his great identity.

Dr. Wahid Bakhsh Buzdar said that Mir Gul Khan Naseer was a versatile writer. He was a poet, writer, researcher, historian, politician and philanthropist. He said that Mir Gul Khan Naseer and Yusuf Magsi were prominent in the literary and political movements of Baluchistan. He liberated the subjugated Baloch nation from the system of tribal oppression.

Dr. Abdul Saboor Baloch said that Mir Gul Khan Naseer was intellectually connected with Faiz, Sheikh Ayaz and Ajmal Khattak. He worked for the Balochi language and literature. He was an all-around creator. His real identity is that of a poet. We need to understand and follow the thoughts and teachings of Mir Gul Khan Naseer.

Dr. Abdullah Jan Abid said that the pleasant aspect of Mir Gul Khan Naseer’s poetry is that he started his poetry from Pakhtunkhwa Charsadda. He said that Mir Gul Khan Naseer, Sheikh Ayaz, our famous Pashto poets Ajmal Khattak and Qalandar Momand struggled not only in the form of poetry but also in practice for their oppressed and downtrodden classes. He said that all these poets had a closeness and the same mission.

Dr. Rahim Bakhsh Mehr, Dr. Liaqat Sunni, Yar Jan Badini, Dr. Ramzan Bamarri and Tariq Rahim Baloch paid homage to Mir Gul Khan Naseer in eloquent words and said that Mir Gul Khan Naseer has written poetry of continuous struggle and revolution.

He said that Mir Gul Khan Naseer was not only a poet of Pakistan but he was also a poet of the oppressed all over the world.

Comments are closed.