گلگت بلتستان کے ادیبوں کے وفد کی چیئرمین اکادمی سے ملاقات


اسلام آباد(پ۔ر)گلگت بلتستان کے نامور ادیب، محقق اور مصنف محمد حسن حسرت کی سربراہی میں ایک وفد نے اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئرمین پروفیسر ڈاکٹر یوسف خشک سے ملاقات کی اور گلگت بلتستان میں ادبی سرگرمیوں کے فروغ سے متعلق امور پر تبادلہ خیال کیا۔ اس موقع پر انہوں نے اپنی نئی تصنیف ”گلگت بلتستان اور ادھورے خواب“ چیئرمین اکادمی ادبیات کو پیش کی۔ یہ کتاب بلتستان سے متعلق پہلا ناول ہے جو گلگت بلتستان کی جنگ آزادی اور خطے کے پاکستان کے قومی دھارے میں شمولیت کے تناظر میں لکھا گیا ہے۔ منفرد انداز میں لکھی گئی کتاب کو خطے میں مقبولیت حاصل ہے۔ چیئرمین اکادمی ڈاکٹر یوسف خشک نے محمد حسن حسرت کی ادبی خدمات کو سراہا اور نئی کتاب کی اشاعت پر مبارکباد دی۔ وفد میں شامل اکادمی ادبیات کے، گلگت بلتستان سے بورڈ آف گورنر ز کے ممبر محمد قاسم نسیم نے اکادمی ادبیات پاکستان کے تحت گلگت بلتستان کے مستحق شعراءو ادباءکو وظائف دینے سمیت دیگر امور پر تبادلہ خیال کیا۔ نوجوان شاعر احسان علی دانش نے بھی علمی وادبی سرگرمیوں سے متعلق گفتگو کی۔


A delegation of writers from Gilgit-Baltistan called on Chairman PAL

Islamabad (P.R) A delegation led by renowned Gilgit-Baltistan writer, researcher, and author Muhammad Hassan Hasrat called on Prof. Dr. Yousuf Kushk, Chairman, Pakistan Academy of Letters (PAL), and discussed issues related to the promotion of literary activities in Gilgit-Baltistan.

On this occasion, he presented his new book “Gilgit-Baltistan and Adhooray Khawab” to the Chairman PAL.

This book is the first novel about Baltistan written in the context of Gilgit-Baltistan’s war of independence and Pakistan’s integration into the region.

The uniquely written book is popular in the region. Dr. Yusuf Kushk Chairman PAL appreciated the literary services of Muhammad Hassan Hasrat and congratulated him on the publication of the new book.

Muhammad Qasim Naseem, a member of the Board of Governors of PAL from Gilgit-Baltistan, who was part of the delegation, discussed other issues including providing scholarships to deserving poets and writers of Gilgit-Baltistan under the Pakistan Academy of Letters. Young poet Ehsan Ali Danish also spoke about academic and literary activities.

Comments are closed.