اکادمی ادبیات پاکستان کی جانب سے ادباءوشعراءکے لئے پچاس لاکھ روپے مالیت کے انعامات کا اعلان




منیر احمد بادینی

اسلام آباد (پ۔ر) ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین اکادمی ادبیات پاکستان نے ایوارڈ کمیٹی کے آن لائن اجلاس کے بعد پریس کانفرنس میں اکادمی کی طرف سے پچاس لاکھ روپے کے”کمالِ فن ایوارڈ 2018 ” اور” قومی ادبی ایوارڈ “2018 انعامات کا اعلان کرتے ہو ئے بتایا کہ اکادمی ادبیات پاکستان کی جانب سے زندگی بھر کی ادبی خدمات کے اعتراف میں ملک کا سب سے بڑا ادبی ایوارڈ “کمالِ فن ایوارڈ 2018” کے لیے بلوچستان سے تعلق رکھنے والے پاکستان کے ممتاز ادیب، ناول نگار اور اہل قلم منیر احمد بادینی کو منتخب کیا گیا ہے۔ “کمال فن ایوارڈ” ملک کا سب سے بڑا ادبی ایوارڈ ہے جس کی رقم دس لاکھ روپے ہے۔ 2018 کے “کمال فن ایوارڈ” کا فیصلہ پاکستان کے معتبر اور مستند اہل دانش پر مشتمل منصفین کے پینل نے کیا جس میں مسعود اشعر، پروفیسر ڈاکٹر پیرزادہ قاسم رضا صدیقی، نورالہدیٰ شاہ، پروفیسر ڈاکٹر روف پاریکھ، قاضی جاوید، ڈاکٹر نصراللہ خان ناصر، محمد ایوب بلوچ، نورخان محمد حسنی، ڈاکٹر سلمیٰ شاہین، ناصر علی سید، محمد حسن حرت اور حارث خلیق شامل تھے۔ اجلاس کی صدارت مسعود اشعر نے کی ۔ “کمال فن ایوارڈ” ہر سال کسی بھی ایک پاکستانی اہل قلم کو ان کی زندگی بھر کی ادبی خدمات کے اعتراف کے طور پر دیا جاتا ہے۔ یہ ایوارڈ ملک کا سب سے بڑا ادبی ایوارڈ ہے جس کا اجراءا کادمی ادبیات پاکستان نے 1997ءمیں کیا تھا۔ یہ ایوارڈ احمد ندیم قاسمی، انتظار حسین، مشتاق احمد یوسفی، احمد فراز، شوکت صدیقی، منیر نیازی، ادا جعفری، سوبھو گیان چندانی، ڈاکٹر نبی بخش خان بلوچ، جمیل الدین عالی، محمد اجمل خان خٹک، عبد اللہ جان جمالدینی، محمد لطف اللہ خان، بانو قدسیہ، محمد ابراہیم جویو، عبداللہ حسین، افضل احسن رندھاوا، فہمیدہ ریاض، کشور ناہید، امر جلیل اور ڈاکٹر جمیل جالبی کو دیا جا چکا ہے۔ چیئرمین اکادمی، ڈاکٹر یوسف خشک نے”قومی ادبی ایوارڈ” برائے سال 2018ء کا اعلان کرتے ہوئے بتایا کہ اردو نثر(تخلیقی ادب) “سعادت حسن منٹو ایوارڈ” حسن منظر کی کتاب “جھجک”، اردو نثر(تحقیقی وتنقیدی ادب) “بابائے اردو مولوی عبدالحق ایوارڈ” ڈاکٹر تحسین فراقی کی کتاب “نکات”، اردو شاعری “ڈاکٹر علامہ محمد اقبال ایوارڈ” زہرا نگاہ کی کتاب “گل چاندنی”، پنجابی شاعری “سید وارث شاہ ایوارڈ” رائے محمد خاں ناصر کی کتاب “ہڈک”، پنجابی نثر “افضل احسن رندھاوا ایوارڈ” احمد شہباز خاور کی کتاب “گُھنوں”، سندھی شاعری “شاہ عبدالطیف بھٹائی ایوارڈ” وفا ناتھن شاہی کی کتاب “آیو جھول بھرے” سندھی نثر “مرزا قلیچ بیگ ایوارڈ” زیب سندھی کی کتاب “آخری ماٹھو”، پشتو شاعری “خوشحال خان خٹک ایوارڈ” افراسیاب خٹک کی کتاب “نوائے تیغ”، پشتو نثر “محمد اجمل خان خٹک ایوارڈ” ڈاکٹر قاضی حنیف اللہ حنیف کی کتاب “پشتو شاعری کے سائنسی شعور او اظہار”، بلوچی شاعری “مست توکلی ایوارڈ” عنایت اللہ قومی کی کتاب “بیا کپوت وش نالگیں”، بلوچی نثر “سید ظہور شاہ ہاشمی ایوارڈ” اکبر بارکزئی کی کتاب “زبان زانتی ءُ بلوچی زبان زانتی”، سرائیکی شاعری “خواجہ غلام فرید ایوارڈ” محمد ظہیر احمد کی کتاب “الا”، سرائیکی نثر “ڈاکٹر مہر عبدالحق ایوارڈ” محمد حفیظ خان کی کتاب” ادھ ادھورے لوک”، براہوئی شاعری “تاج محمد تاجل ایوارڈ” سید علی محمد شاہ ہاشمی کی کتاب “خوشبو نا سفر”، براہوئی نثر “غلام نبی راہی ایوارڈ” عمران فریق کی کتاب “اینو ہم خدا خوشے”، ہندکو شاعری “سائیں احمد علی ایوارڈ” سید سعید گیلانی کی کتاب “پپل وترے”، ہندکو نثر “خاطر غزنوی ایوارڈ” نذیر بھٹی کی کتاب “شام اَلم”، انگریزی نثر “پطرس بخاری ایوارڈ” فاطمہ بھٹو کی کتاب” The Run Aways” ، انگریزی شاعری “داود کمال ایوارڈ” سارہ جاوید کی کتاب “Meraki”اور ترجمے کے لیے “محمد حسن عسکری ایوارڈ” نسیم احمد/ڈاکٹر اقبال آفاقی کے انگریزی سے اردو ترجمہ کی کتاب “فلسفہ تاریخ” کو دیا گیا۔ قومی ادبی انعام حاصل کرنے والی ہر کتاب کے مصنف کو دو دولاکھ روپے بطور انعامی رقم دیے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اہل قلم مذہب، رنگ ونسل، زبان اور خطے سے بالا تر ہو کر صرف انسانیت کے لیے سوچتے ہیں۔ حقیقی فن پارے میں کسی نوعیت کا تعصب نہیں ملے گا اور دنیا کا کوئی بھی معاشرہ صحیح معنوں میں اس وقت تک معزز نہیں کہلا سکتا جب وہ مذہب بنانے والوں کی قدر نہیں کرتا۔ اکادمی ادبیات پاکستان اہل قلم کی خدمات کا اعتراف کرتی رہتی ہے ملک کے نامور ادبی شخصیات کو ادب کے میدان میں ان کی نمایاں خدمات کے اعتراف میں “کمال فن ایوارڈ” دیتی ہے اور اسی طرح ہر سال پاکستانی زبانوں میں لکھے جانے والی بہترین کتابوں پربھی ایوارڈز کا سلسلہ جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ اکادمی ادبیات پاکستان وفاقی وزیر تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت اور قومی ورثہ و ثقافت شفقت محمود اور وفاقی سیکریٹری قومی ورثہ و ثقافت انعام اللہ خان کی سرپرستی میں اکادمی میں” ہال آف فیم”، “لٹریری میوزیم آف پاکستانی لینگویجز” کی تیاری کا آغاز کر رہے ہیں اس کے علاوہ چائنا رائٹرز فورم کے تعاون سے انٹر نیشنل کانفرنس اور پاک ترک لٹریری فیسٹیول پر کام جاری ہے۔

Pakistan Academy of Letters

Press Release

PAL announced Rs. 5 Million’s Awards for Pakistani Writers’ and Poets

Islamabad: Pakistan Academy of Letters to present Rs 5 million in cash to writers for “Kamal Fan Award 2018” and “National Literary Award 2018”. In recognition of his lifetime literary services, the Kamal-e-Fan Award committee has nominated Munir Ahmad Badini, a prominent Pakistani writer, novelist and writer from Balochistan, for the country’s highest literary award “Kamal-e-Fan Award 2018”. This was said by Dr. Yousuf Kushk, Chairman, PAL, in a press conference after the online meeting of the Kamal Fan award committee.

The panel of judges consisted on well-known writers and scholars; Masood Ashar, Prof. Dr. PirzadaQasim Raza Siddiqui, Noor ul Huda Shah, Prof. Dr. Rauf Parekh, QazyJaved, Dr. Nasrullah Khan Nasir, Muhammad Ayub Baloch, Noor Muhammad Khan Hasni, Dr. Salma Shaheen, Nasir Ali Syed, Muhammad Hasan Hasrat and Haris Khalique.

Kamal-e-Fun Award is the highest literary award in the field of literature for recognition of a lifetime’s achievement in creative and research work. The amount of this award is Rs.1,000,000/-

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL has also announced the National Literary Award for the year 2018, given on the best literary books written during the year in Urdu and other Pakistani languages in a Press Conference.

He announced according to the decision of the different panels of Judges for each award for Urdu Prose Saadat Hasan Manto Award (Creative Literature) is given to Hasan Manzar’s book “Jhijak”, Baba-i-Urdu Molvi Abdul Haq Award (Criticism & Research) is given to Dr. Tahseen Firaqui’s book “Nikat”, for Urdu Poetry Dr. Allama Muhammad Iqbal Award, is given to Zahera Nigahon on “Gul-e- Chandni”, Syed Waris Shah Award (Punjabi Poetry) is given to Rai Muhammad Khan Nasir’s book “Hadak”, for Afzal Ahsan Randhawa Award (Punjabi Prose) is given to Ahmad Shahbaz Khawar’s book Ghunnu, for Shah Abdul Latif Bhitai Award (Sindhi Poetry) is given to Wafa Nathan Shahi’s book “Aayo Jhol Bhare” for Mirza Qaleech Baig Award (Sindhi Prose) is given to Zaib Sindhion’s book “Äakhri Manhoo”, for Khushhal Khan Khattak Award (Pushto Poetry) is given to Afrasiab Khattak’s book “Nawe Tegh”, for Muhammad Ajmal Khan Khattak Award (Pushto Prose) is given to Dr. Qazi Hanif Ullah Hanif;s book “Pashto Shairi Ke Sainsi Shaoor O Izhar”, for Mast Tawakli Award (Balochi Poetry) is given to Inayatullah Qaumion’s book “Biya Kapoot Vish Na Lagen”for Syed Zahoor Shah Hashmi Award (Balochi Prose) is given to Akbar Barakzaion’s book “Zaban Zanti-u-Balochi Zaban Zanti”, for Khwaja Ghulam Fareed Award (Seraiki Poetry) is given to Muhammad Zaheer Ahmad’s book “Alla”, for Dr. Maher Abdul Haq Award (Seraiki Prose) is given to Hafeez Khan’s book “Adh Adhoore Lok”, for Taj Muhammad Tajal Award (Brahui Poetry) is given to Syed Ali Muhammad Shah Hashmi’s book “Khushboo Na Safar” for Ghulam Nabi Rahi Award (Brahui Prose) is given to Imran Fareeqon’s book “Aeno Hum Khuda Khushe”, for Saeen Ahmad Ali Award (Hindko Poetry) is given to Syed Saeed Gilani’s book “Pepul Vitere”, for Khatir Ghaznavi Award (Hindko Prose) is given to Nazeer Bhatti’s book “Sham-e-Alam”, for Pitras Bukhari Award (English Prose) is given to Fatima Bhutto’s book “The Run Aways”, for Daud Kamal Award (English Poetry) is given to Sara Javed’s Book “Meraki” for Translation Muhamamd Hasan Askari Award is given to Naseem Ahmad / Dr. Iqbal Afaqi on their translation “Falsafa-e-Tareekh”.

The Award money Rs. 200,000/- will be given to each Award winner for the National Literary Award 2018.

He said that the writers think only for humanity beyond religion, race, language and region. There will be no prejudice in real writing and no society in the world can truly be called honorable unless it values the creators. PAL continues to acknowledge the services of the writers of the country and every year there is a series of awards for the best books written in Pakistani languages.

He said that PAL under the auspices of with Federal Minister for Education and Professional Training and National Heritage and Culture Shafqat Mehmood and Federal Secretary National Heritage and Culture Inamullah Khan will prepare the “Hall of Fame”, “Literary Museum of Pakistani Languages” in the PAL. In addition, work is underway the Pak-Turkish Literary Festival and International Conference in collaboration with China Writers Forum.

Comments are closed.