اہل قلم کے انتقال پر اکادمی ادبیات پاکستان کی تعزیت

اکادمی ادبیات پاکستان

پریس ریلیز

اسلام آباد(پ ۔ ر) اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئرمین ڈاکٹر محمد یوسف خشک نے اردواورپشتوکے محقق اور نقاد شیرافضل خان بریکوٹی، اردو کے افسانہ نگار، محقق، خاکہ نگار اور مدیر احمد زین الدین اور پوٹھوہار کے شاعر، نعت و نوحہ خواں، نغمہ نگار، پی ٹی وی ایوارڈ یافتہ ڈرامہ نگار سید اسجد علی کاظمی کے انتقال پرگہرے رنج کا اظہارکرتے ہوئے اپنے تعزیتی پیغام میں کہا ہے کہ شیر افضل خان بریکوٹی نے لندن رہتے ہوئے بھی پشتو ادب کے فروغ کے لیے گراں قدر خدمات دیں اورقومی یک جہتی کے لیے تخلیقی سطح پروقیع کام کیا۔ ان کی کتاب ” اقبال میرا ہم سفر“ سے ان کی علامہ اقبال کے فکر و فلسفے سے گہری وابستگی کا اندازہ ہوتا ہے۔ انہوں نے روحانی شخصیات بایزید پیر روخان، رحمان بابا، عبدالحمید ماشوخیل کے حوالے سے منفرد تحقیقی کام کیا ہے۔ شیر افضل خان بریکوٹی کی کتابیں ”زمزمہ رحمان“ ،”سخن طراز عبدالحمید مومند“، ”بایزید پیر روخان“، ”تعارف سوات “ اور ”پشتو ادب کی تاریخ “ اہمیت کی حامل ہیں۔ ان کی گراں قدر تحقیقی و تنقیدی کاوشوں کو علمی ادبی حلقوں میں عزت و تکریم سے دیکھا جاتا ہے۔ شیرافضل خان بریکوٹی کی وفات پشتو ادب بلکہ پاکستانی ادب اور تہذیب کا بہت بڑا نقصان ہے۔ انہوں نے کہا کہ احمد زین الدین کا بنیادی حوالہ افسانہ نگاری ہے مگر نمایاں ترین کارنامہ سہ ماہی ”روشنائی“ ہے۔ صحافت بھی ان کا ایک حوالہ رہا ہے۔ احمد زین الدین کے افسانوی مجموعے”دریچے میں سجی حیرانی” “دھند میں لپٹے خواب” ، تنقید اور شخصی خاکوں کا مجموعے “رنگ شناسائی”،”چہرہ چہرہ کہانیاں”، جنوبی ایشیائی کہانیوں کے تراجم “کہانیوں کی کہکشاں”، مضامین کا مجموعے “حرفِ پذیرائی”، “اظہار کے زاویے” اور “حیرانی کی منزلیں” اردو ادب کا گراں قدر سرمایا ہیں۔ ڈاکٹر یوسف خشک نے شیر افضل خان بریکوٹی، احمد زین الدین اور سید اسجد علی کاظمی کی وفات پرگہرے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے ان کے لیے مغفرت اورلواحقین کے لیے صبرکی دعاکی۔


Pakistan Academy of Letters

Press Release

Islamabad: (PR) Dr. Yusuf Khushk, Chairman, Pakistan Academy of Letters expressed his condolences on the sad demises of renowned Pashto and Urdu researcher and critic Sher Afzal Khan Birkotti. The Chairman, PAL also expressed his condolence on the death of Urdu fiction writer, researcher and Editor Ahmad Zainuddin and on the sad demise of poet and playwright of Phothar region Syad Asjad Ali Kazmi.

In his condolence message, Dr. Yousuf Khushak said that Sher Afzal Khan Brikotti has contributed valuable services to promote Pashto literature and worked actively for national unity. His book “Iqbal Mera Humsafar” unfolds his deep association with Allama Iqbal’s thought and philosophy. He has done unique research on the Sufi personalities of Bayazid Pir Rokhan, Rehman Baba and Abdul Hameed Mashokhel.

He said that Sher Afzal Khan Brikotti’s books “Zamzama Rehman”, “Saukhan Taraz Abdul Hamid Momand”, “Bayazid Pir Rokhan”, “Tarof e Swat” and “History of Pashto Literature” are viewed with respect in literary circles. The death of Sher Afzal Khan Brikotti is a great loss to Pashto literature and culture.

Dr. Khushak said that Ahad Zainuddin’s is an important name in fiction, but his most notable achievement is the quarterly “Roshni”. He was also a known name in the field of journalism.

Ahmad Zainuddin’s fiction collection “Daricha Mein Saji Hairani”, “Dhund Ma Lipta Khab”, Collections of criticism and Personal Sketches “Rang Shanasai”, “Chara Chara Kahani”, translation of South Asian stories “Kahaniu Ki Khakashn”, Articles Collection “Harfa Pezirai”, “Izhar Ka Zavia” and “Harani Ki Manzilian” are the great asset of Urdu literature.

Chairman of the Academy, Dr. Yousuf Khushak prayed for forgiveness of the departed souls and for the bereaved family to bear this loss.

Comments are closed.