سندھی، اردو اور انگریزی زبان کے مشہورڈرامہ نگار، ادیب اورکالم نگار عبدالقادر جونیجو کے انتقال پراکادمی ادبیات پاکستان کی تعزیت

اسلام آباد (پ ۔ ر) اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئرمین ڈاکٹر یوسف خشک نے سندھی، اردو اور انگریزی زبان کے مشہورڈرامہ نگار، ادیب اورکالم نگار عبدالقادر جونیجو کے انتقال پرگہرے رنج کا اظہار کرتے ہوئے اپنے تعزیتی پیغام میں کہا کہ عبدالقادر جونیجو پاکستانی ادب، ڈرامہ نگاری کے حوالے بہت اہم نام ہے۔وہ الفاظ پر مہارت رکھنے والے صاحب اسلوب نثر نویس تھے۔ وہ عالمی ادب پر گہری نظر رکھنے کے ساتھ ساتھ سندھ کے فوک وزڈم میں خصوصی دلچسپی رکھتے تھے۔ان کے انتقال سے پاکستانی ادب سنجیدہ ڈرامہ نگار سے محروم ہو گیا ہے۔عبدالقادر جونیجو کی انگریزی کتاب “دی ڈیڈ ریور“(2014) اور سندھی زبان میں کتابیں ”واٹوں،راتیون ایں رول“،”شکلیون“، ”ویندڑ واھی لھندڑ سج“، ”وڈا ادیب وڈیوں گالھیون“، ”سونو روپ سج“، ”ایورسٹ تی چڑھائی“، ”کرسی“، ”چھو چھاکیئن“، ”خط بن ادیبن جا“، ”در در جا مسافر“ اور ”وڑں وڑں جی کاٹھی“اور دوسری کتابیں ادب کا گراں قدر سرمایہ ہیں اور نئی نسل کے لیے مشل راہ ہیں۔ انہوں نے پاکستان ٹیلی ویڑن اور نجی چینلزکے لیے ڈرامے اور سیریل لکھے جن میں ”پراندہ“ اور ”دھول“ نے جنوبی ایشیاء میں مقبولیت حاصل کی۔ ان کے ڈرامے”دیواریں“،”چھوٹی سی دنیا“اور”تھوڑی سی خوشی تھوڑا غم“ نے بھی ملک گیر شہرت حاصل کی۔ انہوں نے سندھی زبان میں چھ او اردو زبان میں 13 مقبول ڈرامہ سیریل تحریر کیں۔ 1989 اور 2008 میں ان کی ادبی خدمات پر پرائیڈ آف پرفارمنس، تین مرتبہ پی ٹی وی کا بہترین اسکرپٹ رائٹر ایوارڈ کا دیا گیا۔ چیئرمین اکادمی ڈاکٹر یوسف خشک نے کہا کہ عبدالقادر جونیجو کی وفات سندھی،اردو بلکہ پاکستانی ادب اور تہذیب کا بہت بڑا نقصان ہے۔ انہوں نے عبدالقادر جونیجو کی وفات پر بھی کہرے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے ان کے لیے مغفرت اور لواحقین کے لیے صبر جمیل کی دعا کی۔

Pakistan Academy of Letters

Press Release

Dr. Yusuf Khushk, Chairman, Pakistan Academy of Letters expressed his condolences on the sad demises of renowned Sindhi, Urdu and English language playwright, writer and columnist Abdul Qadir Junajo.

In his condolence message, Dr Yousuf Khushak said that Abdul Qadir Junajo was a leading name of Pakistani literature and play writing. He had a keen eye on world literature as well as a special interest in the folklore of Sindh. With demise of Abdul Qadir Junejo, Pakistani literature has lost a thinker and scholar of national fame.

Dr. Khushk said that his books in Sindhi language “Watoon, Ratyoon Ain Rol” (1973), “Shikliyoon”(1979), “Weender Wahi Lahandar Sijj” (1984), “Wada Adeeb Wadyoon Galhyoon” (1984), “Sono Roop Sijj” (1986), “Everest te Charhai” (1987), “Kursi”(1998), “Chho Chha Ain Keein” (1999), “Khat bin Adeeban Ja” (1999), “Dar Dar ja Musafir” (2001) and “Wan Wan Jee Kathiee” (2002), “The Dead River” English (2014) and other books are an asset to literature and sources of inspiration for a new generation.

He said that Abdul Qadir Junajo wrote many dramas and serials for PTV and commercial channels. He gained popularity in South Asia from his dramas “Paranda” and “Dhool”. He wrote six drama serials in Sindhi language and 13 in Urdu language. He has been honored with the prestigious awards for creative writers including “Pride of Performance” for 1989 and 2008.

Chairman of the Academy Dr. Yousuf Khushak prayed for forgiveness of the departed soul and for the bereaved family to bear this loss.

Comments are closed.