خواتین کے عالمی دن کی مناسبت سے”تخلیقی ادب اور پاکستانی اہل قلم خواتین“ سمینار اور پاکستانی زبانوں کا مشاعرہ


اکادمی کی تقریب میں ڈاکٹر شائستہ نزہت، صائم ندیم ،پارلیمیانی سیکرٹری اورڈاکٹر یوسف خشک


اکادمی کی تقریب میں ڈاکٹر ناہید قمر، ڈاکٹر شائستہ نزہت، صائم ندیم ،پارلیمیانی سیکرٹری ،ڈاکٹر یوسف خشک اور ڈاکٹر فاخرہ نوریں اسٹیج پر بیٹھے ہیں ۔


اکادمی کی تقریب میں ڈاکٹر ناہید قمر، ڈاکٹر شائستہ نزہت، صائم ندیم ،پارلیمیانی سیکرٹری ،ڈاکٹر یوسف خشک اور ڈاکٹر فاخرہ نوریں اسٹیج بیٹھے ہیں ۔ ڈاکٹر صوفیہ یوسف خطاب کر رہی ہیں۔


اکادمی کی تقریب میں ڈاکٹر ناہید ڈاکر ناہیدقمر، ڈاکٹر شائستہ نزہت، صائم ندیم ،پارلیمیانی سیکرٹری ،ڈاکٹر یوسف خشک اور ڈاکٹر فاخرہ نوریں اسٹیج بیٹھے ہیں ۔

اسلام آباد (پ۔ ر) ہماری حکومت معاشرے میں ادب، شاعری اور فنون لطیفہ کے ذریعے پرامن ماحول، برداشت اور بھائی چارے کی فضا قائم کرنا چاہتے ہیں۔خواتین زندگی کے مختلف میدانوں میں ایک فعال کردار ادا رکررہی ہیں بلا شبہ بہتر معاشرے کی تشکیل میں خواتین کے کردار کو فراموش نہیں کیا جا سکتا۔ ان خیالات کا اظہارصا ئمہ ندیم، پارلیمانی سیکرٹری، وزارت بین الصوبائی رابطہ، نے اکادمی ادبیات پاکستان کے زیر اہتمام خواتین کے عالمی دن کی مناسبت سے”تخلیقی ادب اور پاکستانی اہل قلم خواتین“کے موضوع پر منعقدہ سمینارمیں بطور مہمان خصوصی کیا۔صدارت ڈاکٹر شائستہ نزہت نے کی۔ ڈاکٹر ناہید قمرنے کلیدی مقالہ پیش کیا۔ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان نے مہمانوں کا شکریہ ادا کیا۔ بعدازاں ”پاکستانی زبانوں کا مشاعرہ‘ ‘ منعقد ہوا جس میں پاکستانی زبانوں کی نمائندہ شاعرات نے کلام پیش کیا۔صا ئمہ ندیم نے کہا کہ زندگی کا کوئی بھی شعبہ ہو پاکستانی خواتین نے ان میں نمایاں کام سرانجام دےے ہیں۔ شعبہ ادب میں بھی خواتین اہل قلم کسی سے پےچھے نہیں ۔انہوں نے کہا کہ پاکستانی زبانوں کے ادب کے ذریعے خواتین کو یکجا کرنے کی ضرورت ہے ہم جن خواتین کے موضوعات پر بات کرتے ہیں ان کو اس کا پتہ ہی نہیں ہوتا۔ خواتین کو مرکزی دھارے میں لانے کی ضرورت ہے۔ادیب کا ایک لفظ، شعر اور کتاب سے آنے والی نسل کی زندگیاں بدل سکتی ہیں۔ ہمیں اپنی نئی نسل میں مثبت تبدیلیاں پیدا کرنے کے لیےمثبت سوچ اپنانے کی ضرورت ہے۔خواتین کے مسائل کے حل کے حوالے سے ہمیں من حیث القوم اپنی سوچ اور رویوں میں تبدیلی لانا ہوگی۔تعلیم ہی وہ واحد ذریعہ ہے جس سے ہم معاشرے میں مثبت سوچ کو پروان چڑھا سکتے ہیں۔ خواتین کے حقوق تو آج سے 1400سال پہلے حضور نے طے کیے ہیں۔ ہمیں اُن کے حقوق کے حصول کے لےے مشترکہ جدوجہد کی ضرورت ہے جو سماجی سطح پر رخنہ اندازی کی وجہ سے پامال کےے جاتے ہیں۔ڈاکٹر شائستہ نزہت نے کہا کہ پاکستان کی عورتیں اب اپنے حقوق سے آگاہ ہوتی جار ہی ہیں اور اہلِ قلم خواتین کی ذمہ داری ہے کہ وہ عورتوں کے مسائل اور ان کے حل کے لیے لکھتی رہی۔ شعر و ادب کے میدان میں خواتین کامیابی سے اپنا سفر جاری رکھیں گی۔کستانی ادب، شاعری اور نثر دونوں اصناف میں عورتوں کے حقوق اور مسائل کے حوالے سے بہت کچھ لکھا جا چکا ہے۔خواتین زندگی کے مختلف میدانوں میں ایک فعال کردار ادا رکررہی ہیں بلا شبہ بہتر معاشرے کی تشکیل میں خواتین کے کردار کو فراموش نہیں کیا جا سکتا۔ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین اکادمی ادبیات پاکستان ، نے کہا کہ پاکستانی ادب میں خواتین اہل قلم کی لکھنے والوں کی طویل روایت موجود ہے۔ ان خواتین میں بہت اہم اور معتبر نام شامل ہیں۔ زندگی کا کوئی بھی شعبہ ہو پاکستانی خواتین نے ان میں نمایاں کام سرانجام دےے ہیں۔ شعبہ ادب میں بھی خواتین اہل قلم کسی سے پیچھے نہیں ۔ اکادمی ادبیات پاکستان وقتاً فوقتاً اہل قلم خواتین کے حوالے سے تقریبات منعقد کرتی رہتی ہے۔سماجی ترقی میں خواتین اہل قلم کی تحریروں کا اہم حصہ ہے۔سماجی ترقی کے لےے کوشش ہوگی کہ ان اہل قلم خواتین کی تحریروںاور کاوشوں کواجاگر کیا جائے۔ صوفیہ یوسف نے کہا کہ پاکستان کی عورتیں اب اپنے حقوق سے آگاہ ہوتی جار ہی ہیں اور اہلِ قلم خواتین کی ذمہ داری ہے کہ وہ عورتوں کے مسائل اور ان کے حل کے لیے لکھتی رہی۔ڈاکٹر ناہید قمر ”تخلیقی ادب اور پاکستانی اہل قلم خواتین“کے موضوع پر مقالہ میں پاکستانی زبانوں میں لکھنے والی خواتین کی تحریروں کوزیر بحث لائیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی اہل قلم خواتین کی تحریریں عالمی سطح پرپیش کی جاسکتی ہیں۔ انہوں نے تمام موضوعا ت کا احاطہ کیا ہے۔

Pakistan Academy of Letters

(Press Release)

Islamabad (PR) Government is committed to promote peace tolerance and brotherhood through literature in the society. The Pakistani women are playing undeniable important and active role in every discipline of life to form an ideal society. These views were expressed by Syma Nadeem, Parliamentary Secretary for Inter Provincial Coordination, as a chief guest while addressing to a seminar “Creative Literature and Pakistani Women Writers” organized by Pakistan Academy of Letters (PAL) on the occasion of International Women Day.

Dr. Shaista Nuzhat presided over the seminar while Key note address on the topic “Creative Literature and Pakistani Women Writers” presented by Dr. Naheed Qamar. Dr. Soofia Yousuf also talked about the topic. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL thanked the guests. At the end “Poetry reading of Pakistani Languages”was held in which representative poetess of Pakistani languages rendered her poetry. The proceedings were conducted by Dr. Fakhira Noreen.

Syma Nadeem said that It is high time to unite the women and to provide them equal opportunities in development of country. Our Government has taken certain new initiative for uplifting of women particularly in field of health and education, she added. She also emphasized upon society to change prevailing thoughts and behiavors towards women.

Dr. Shaista Nuzhat, a prominent poet and writer during her presidential speech highlighted the problems being faced by Pakistani women in general and by women writers in particulars. She also paid tribute to Pakistani women writers for their courge and efforts for their rights. She also expressed her commitment on behalf of all Pakistani women writer for formation of peaceful society and development of country.

While addressing to the seminar, the Chairman, PAL Dr. Yousuf Khushk said that we have a prominent women writer in literary history of Pakistan. Contribution by Pakistani women in the field of literature is recognized all over the world. The PAL will continue to encourage the women writer equally.

He said that Female writers always played a crucial role in the social development of Pakistan. Efforts would be made to future strengthen/highlight their struggles and writings.
Dr. Soofia Yousuf said that Pakistani women are becoming aware to a greater extent regarding the rights and it becomes the social responsibility of female writers to highlight of their issues as well as solutions too.

Dr Naheed Qamar in her resource paper titled “Creative literature and Pakistani Women Writers” talked about female writers of different Pakistani Languages. She said that Pakistani Women Writings could that recognition on international level.

Renowned poetess of twin cities including Dr. Sadaf Kashif, Naureen Aman Shama, Rashan Kaleem, Sajida Maqbool Tanha, Samina Tasneem, Noor ul Ain Saadia, Afshan Abbasi, Dr. Fakhra Naureen, Rukhsana Sehar, Bushra Hazeen, Sabeen Younas, Shaista Chaudhry, Dur-e-Shahwar Tauseef, Aisha Masood, Dr. Naheed Qamar, Dr. Shaista Nuzhat and other recited their poetry.

Comments are closed.