اکادمی ادبیات پاکستان کے زیر اہتمام ڈاکٹر علی یاسر ریفرنس


ڈاکٹر علی یاسر ریفرنس میں محمد سلمان، عمار علی یاسر، غزالہ سیفی، افتخار عارف محمد اظہار الحق،علی اکبر عباس اور ڈاکٹر ارشد محمود ناشاد اسٹیج پر بیٹھے ہیں۔


ڈاکٹر علی یاسر ریفرنس میں محمد سلمان، عمار علی یاسر، غزالہ سیفی، افتخار عارف محمد اظہار الحق،علی اکبر عباس اور ڈاکٹر ارشد محمود ناشاد


ڈاکٹر علی یاسر ریفرنس میں محمد سلمان، عمار علی یاسر، غزالہ سیفی، افتخار عارف اور محمد اظہار الحق اسٹیج پر بیٹھے ہیں۔

ڈاکٹرعلی یاسر دھیمے لہجے کے خوبصورت شاعر تھے۔غزالہ سیفی
علی یاسرکی موت کی خبر نے رْلا دیا ہے۔افتخار عارف
ہم نے علی یاسر کو نہیں اپنے مستقبل کو کھو دیا ہے۔محمداظہارالحق
اسلام آباد (پ۔ر) ڈاکٹرعلی یاسر دھیمے لہجے کے خوبصورت شاعر تھے، وہ سیلف میڈ اور عملی زندگی میں خوش گفتار اور نفیس انسان تھے، وہ دفتری کام کو ذاتی کام سمجھ کر انتہائی تندہی کے ساتھ انجام دیتے تھے۔ان خیالات کا اظہارغزالہ سیفی، سیکرٹری برائے قومی تاریخ و ادبی ورثہ ڈویژن نے اکادمی ادبیات پاکستان کے زیر اہتمام ڈاکٹر علی یاسر ریفرنس میں کیا۔مجلس صدارت میں افتخار عارف،محمد اظہار الحق، علی اکبر عباس اور ڈاکٹر ارشد محمود ناشاد تھے۔ اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئرمین محمد سلمان نے مہمانوں کا شکریہ ادا کیا۔ ریفرنس میں علی یاسر کے صاحبزادے عمار علی یاسر بھی موجود تھے۔ ممتاز دانشور اور اہل قلم نے ڈاکٹر علی یاسر کی شخصیت اور فن کے حوالے سے گفتگو کی۔ نظامت عابدہ تقی نے کی۔ریفرنس میں نیشنل بک فائڈیشن کی طرف سے ڈاکٹر علی یاسر کی نئی شائع ہونے والی کتاب ’’ـتصور فنا و بقا اُردو غزل کے تناظر میں ‘‘ ڈاکٹر انعام الحق جاوید نے پروفیسر جلیل عالی کو پیش کی ۔پروگرام کے اختتام پر دعائے مغفرت کی گئی۔غزالہ سیفی نے کہا کہ اکادمی کے متعلق پروگراموں میںعلی یاسر کو ہمیشہ چاق وچوبندپایا۔اکادمی ایک محنتی آفیسراور خوبصورت لکھنے والے سے محروم ہوگئی جس کا ہم سب کو دُکھ ہے اور اس کا ازالہ ناممکن ہے۔انہوں نے کہا کہ اُن کی شاعری سنی ہے وہ ایک عمدہ لکھنے والے اور اچھے شاعر تھے یقینا وہ بہت ترقی کرتے لیکن اب بھی ان کی تخلیقات پڑھنے والوں کے لیے قیمتی سرمایہ ہے۔ اُن کا پی ایچ ڈی کا تحقیقی مقالہ جس کا عنوان ’’ـتصور فنا و بقا اُردو غزل کے تناظر میں‘ ‘ ہے یہ یقینا اپنے معیار کے اعتبار سے اہم کتاب ہے جس میں اُنہوںنے اسلام اور دیگر مذاہب و فلسفہ کے تناظر میںاس موضوع کو دیکھا ہے۔میری دُعا ہے کہ خدا ان کی مغفرت فرمائے اور لواحقین کو صبر جمیل عطا فرمائے۔افتخار عارف نے کہا کہ علی یاسرکی موت کی خبر نے رْلا دیا ہے۔ اْس میں آگے بڑھنے کی صلاحیت تھی اور اْس کے ارادے مستحکم تھے لیکن قدرت کو کچھ اور ہی منظور تھا۔ وہ مختصر قیام کے بعد دوستوں کو الوداع کہتے ہوئے اگلی منزل کی طرف روانہ ہوگیا۔ راولپنڈی؍ اسلام آباد کی پروین شاکر کی ناوقت موت کے بعد یہ دوسرا بڑا سانحہ ہے جس نے پوری ادبی برادری کو افسردہ اور رنجورکردیا۔علی یاسر ہمہ وقت شاعر تھا ۔ قلم سے وابستگی کل وقتی تھی، ادب ، ریڈیو ، ٹی وی ، ادبی سرگرمیاں اور اکادمی کی ذمہ داری میں ہمیشہ پیش پیش رہا۔ محمد اظہار الحق نے کہا کہ علی یاسر ا ن نوجوانوں میں سے تھے جن میں روشن مستقبل صاف نظر آرہا تھا۔ابھی ان کا عروج شروع ہوا تھا اور انہوں نے بہت آگے جانا تھا مگر افسوس وہ ہم سے بچھڑ گے۔ ہم نے علی یاسر کو نہیں اپنے مستقبل کو کھو دیا ہے۔ علی اکبر عباس نے کہا کہ علی یاسراس شہر کے لیے اللہ کی ایک نعمت کے طور پر آیا تھا۔ اہل شہر نے اس کو بڑی محبت سے جگہ دی اور وہ خود بھی اپنی جگہ بناتا چلا گیا۔ اہل اسلام آبادایک دوسرے کو پوچھ رہے ہیں کہ علی یاسر کہاں چلا گیا۔ ڈاکٹر ارشد محمود ناشاد نے کہا کہ زندگی کے منظرنامے سے علی یاسر کا یوں اُٹھ جانا ایک دردناک کہانی اور ایک درد انگیز سانحہ ہے جسے دل ماننے کو تیار نہیں۔ علی یاسر ایک فعال، متحرک، بے قرار اور سیماب صفت نوجوان تھااس نے عزم و ہمت ، جرأت و جواں مردی اور جلوہ ٔ شوق سے اپنے لیے راستہ بنایا تھا۔ اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئرمین محمد سلمان نے کہا کہ ڈاکٹر علی یاسر کی وفات سے اکادمی ادبیات کے ساتھ ساتھ ان کے اہل خانہ اور شاعروں کی برادری کو بھی ایک بہت بڑا نقصان پہنچا ہے۔ ڈاکٹر علی یاسر اکادمی ادبیات کے محنتی افسر اور مشہور شاعر تھے۔ اشارہ کے چیئرمین جنید آذر نے کہا کہ علی یاسر نے ادب کے فروغ میں جو کردار ادا کیا وہ کبھی بھلایا نہیں جا سکتا ہے۔ علی یاسر کے بیٹے عمار علی یاسر، ڈاکٹر انعام الحق جاوید، سرفراز شاہد،ڈاکٹر راشد حمید، پروفیسر جلیل عالی، ضیاء الدین نعیم،محمد حمید شاہد ، شاہین سلطانہ، حسن عباس رضا، نجیبہ عارف، ڈاکٹر حمید قیصر، شکیل اختر، انیق الرحمن ، شہباز چوہان، افشاں عباسی، مظہر شہزاد، وجیہہ نظامی، سلطان شاہین، پروین طاہر، فرحین چوہدری، ڈاکٹر فرحت عباس، زاہد جتوئی، محبوب ظفر، انجم خلیق، درشہوار توصیف، شمیم حیدر سید اور دیگر نے ڈاکٹر علی یاسر کے فن اور شخصیت کے حوالے سے گفتگو کی۔

 

Pakistan Academy of Letters
Islamabad (P.R): Dr. Ali Yasir was beautiful poet of slow accent. He was self made and well versed in educational life and decent personality. He was hardworking officer and always considered office work as his personal. He was always remained active in literary functions of the Pakistan Academy of Letters. These views were expressed by Gazala Safi, Parliamentary Secretary, National History and Literature Heritage Division in a literary Reference in the memory of poet, writer and PAL officer Dr. Ali Yasir organized by Academy of Letters.
Presidium consists on Iftikhar Arif, Muhammad Izhar-ul-Haq, Ali Akbar Abbas, and Dr Arshad Mehmood Nashad. Mohammad Salman, Chairman of Pakistan Academy of Letters thanked the guests. Prominent Intellectuals and Writers spoke about the personality and literary work of Dr. Ali Yasir. Ali Yasir’s son Ammar Ali Yasir was also present at the reference. Reference conducted by Abida Taqi. Participants prayed for the departed soul to rest in eternal peace.
The Newly published book by NBF of Dr. Ali Yasir “Tasawar-e- Fana wa Baqa Urdu Ghazal k Tanazur me” presented to Jaleel Alli by Dr. Inam-ul-Haq Javed.
Ghazala Safi said that the books of PAL published by him were beautiful and standard. The PAL has deprived of hardworking officer and good writer which were sad for us and his replacement impossible.
She said he was one of the decent writer and poet as I listens his poetry. Indeed, he would get more success but now also his books were precious asset for the researchers.
Ghazala Safi said that his PhD thesis was titled “Tasawar-e- Fana wa Baqa Urdu Ghazal k Tanazur me” which was published. This was indeed one of the important and standard books. In this book, he shed light on Islam and other religions philosophy.
She said that I would request PAL that if any kind of help on me for the family of Dr. Ali Yasir, than I am available. I pray Almighty Allah rest his departed soul in eternal peace and grant courage to the family and writers to bear the irreparable loss with fortitude.
She said that I am also very sad on the sudden death of Dr. Ali Yasir like Scholars, writer’s community.
Iftikhar Arif termed Yasir’s death as a great loss in the world of literature at a very young age, saying that his death news was heartbreaking, he had the ability to move forward with strong determination but he left his fans in young age.
He said that after Parveen Shakir of twin cities of Rawalpindi and Islamabad, it is the second biggest incident that saddened the whole literary world, they said adding that Ali Yasir was a poet and writer at the same time and was always present in the responsibilities of Academy. He was always considered as a young civilized poet.
Muhammad Izhar-ul-Haq said that Dr. Ali Yasir was the amongst those whose bright future was reflecting. This was just his start of his rise, but unfortunately, we lost him, we lost our future.
Ali Akbar Abbas said that Ali Yasir was a blessing for this city. He made his place in the heart of people. He distributed love among the people. Now people of this city are asking about him that where is Ali Yasir.
He said that Ali Yasir was among those youngsters whose bright future was clearly seen, it was his peak time when he left this world, we not only lost Ali Yasir but we have lost our future.
Dr Arshad Mehmood Nashad while speaking at event has said that death of a young scholar is a tragedy which is very difficult to accept. Dr. Ali Yasir was a restless soul, who made his own way in life.
PAL Chairman Muhammd Salman said that Dr. Ali Yasir’s death a great loss to the PAL as well as his family and poets community.
PAL chairman said Dr. Ali Yasir was a prolific poet and a distinguished officer of the PAL and had established his credentials as writer, researcher, critic, translator, radio and TV writer and anchor person.
Son of Ali Yasir Ammar Ali Yasir, Dr. Inam-ul-Haq Javed, Sarfraz Shahid, Dr. Rashid Hameed, Prof. Jalil Aali, Zia-ud-Din Naeem,Muhammad Hameed Shahid, Shaheen Sultana, Hassan Abbas Raza, Najiba Arif, Dr. Hameed Qaiser, Shakeel Akhtar, Aneeq-ur-Rehman, Shahbaz Chohan, Afshan Abbasi, Mazhar Shahzad, Wajiha Nizami, Sultan Shaheen, Parveen Tahir, Farheen Chaudhry, Dr. Farhat Abbas, Zahid Jatoi, Mehboob Zafar, Anjum Khaleeq, Dur-e-Shahwar Tauseef, Shamim Haider and others talked about the work and personality of Dr. Ali Yasser.

Comments are closed.