ڈاکٹر علی یاسر کے انتقال پر اکادمی ادبیات پاکستان کی تعزیت


اسلام آباد (پ ۔ر)ڈاکٹرعلی یاسرایک عمدہ شاعر اور ادیب ہونےکے ساتھ ساتھ ایک محنتی افسر بھی تھے۔ ان خیالات کا اظہار اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئرمین محمد سلمان نے جواں سال شاعر، ادیب، محقق، نقاد، مترجم، ریڈیو و ٹی وی رائیٹر اور اینکر پرسن ڈاکٹر علی یاسر کی اچانک وفات پر اپنے تعزیتی پیغام میں کہی۔ اکادمی کے افسران اور عملہ نے بھی ان کے اچانک انتقال پر گہرے دکھ کا اظہار کیا ہے۔ ڈاکٹر علی یاسر 13 دسمبر 1976 کو گوجرانوالہ میں پیدا ہوئے اور44سال کی عمر میں انتقال کر گئے۔ انہوں نے پنجاب یونیورسٹی لاہور سے ایم اے اردو کیا، علامہ اقبال یونیورسٹی سے اردو میں ایم فِل کرنے کے بعد”اردو غزل میں تصور فنا و بقا“ کے موضوع پر پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی -علی یاسر اکادمی ادبیات پاکستان میں اسسٹنٹ ڈائریکٹر کے عہدے پر فائز تھے- وہ میڈیا سے بھی وابستہ رہے اور ریڈیو اور ٹی وی پروگراموں کی میزبانی کرتے رہے- انہوں نے پی ٹی وی کے لئے بہت سی دستاویزی فلموں کے اسکرپٹس اور نغمے تحریر کیے- بطور مترجم انہوں نے انگریزی اور پنجابی سے اردو میں تراجم کئے جن میں “چین کی محبت کی نظمیں” اور “نوبل لیکچر” شامل ہیں- علی یاسر کی غزلوں کا مجموعہ 2007 میں”ارادہ“ 2016 میں دوسرا مجموعہ ”غزل بتائے گی “شائع ہوا- علی یاسر نے 2008 اور 2010 میں اہلِ قلم ڈائریکٹری مرتب کی- ”کلیاتِ منظور عارف“ اور”اردو غزل میں تصورِ فنا و بقا“ کے عنوانات سے ان کی کتابیں زیرِ طبع ہیں- انہیں ان کے آبائی گاوں راھوالی میں سپرد خاک کر دیا گیا۔ چیئرمین اکادمی محمد سلمان اور اکادمی کے افسران و سٹاف نے ڈاکٹر علی یاسرکے لیے مغفرت اور لواحقین کے لیے صبر جمیل کی دعا کی۔اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام ڈاکٹر علی یاسر تعزیتی ریفرنس، بدھ19فروری 2020کو 3:00بجے، سہ پہر، اکادمی ادبیا ت پاکستان کے کانفرنس ہال ، پطرس بخاری روڈ، سیکٹر ایچ ا یٹ ون، اسلام آباد میں منعقد کیا جارہا ہے جس میں احباب انہیں خراج عقیدت پیش کریں گے۔


Pakistan Academy of Letters, Islamabad
Press ReleaseIslamabad(P.R) Dr. Ali Yasir was a prolific poet as well as a hardworking officer of PAL. These views were expressed by Muhammad Salman, Chairman, Pakistan Academy of Letters (PAL), in his condolence message on the sudden demise of poet, writer, researcher, critic, translator, radio and TV writer and anchor person Dr. Ali Yasir.

PAL officers and staff also expressed deep grief over his sudden demise.

Dr. Ali Yasser was born on December 13, 1976 in Gujranwala and died at the age of 44.
He earned his MA in Urdu from Punjab University Lahore. After completing his M.Phil in Urdu from Allama Iqbal University, he got his PhD on the subject of “Urdu Ghazal main Tasawar-e-Fana-o-Baqa”. Ali Yasir holds the position of Assistant Director of PAL

He was also affiliated with the media and hosted radio and TV programs
He wrote many documentary films scripts and songs for PTV
As a translator, he translated English and Punjabi into Urdu, including “Chinese love poems” and “Noble Lectures.”
Ali Yasi’s collection of Ghazals”Irada” in 2007, the second collection titled “Ghazal Batay Gi” was published in 2016.
Ali Yasir compiled the “Ehl-e-Qalam Directory” in 2008 and 2010.
His books under the titles of “Kuliyat-Manzoor Arif” and “Urdu Ghazal main Taswar-e-Fana-o-Baqa” are in press for printing.

He buried in his native town in Gujranwala.

Pakistan Academy of Letters is organizing a Condolence Reference on 19th February 2020, Wednesday, at 3:00 Pm, in the conference hall of PAL, Pitras Bukhari Road, Sector H-8/1, Islamabad to pay tribute to Dr. Ali Yasir. Poets, writers and his friends will remember Dr. Ali Yasir and share their memories with the audience and participants by his feelings the personality and works of Dr. Ali Yasir.

Comments are closed.