پانچ روزہ تقریبات بسلسلہ یوم اقبال کاافتتاح


اسلام آباد(پ۔ر)شفقت محمود، وفاقی وزیر برائے تعلیم و فنی تربیت اور قومی تاریخ و ادبی ورثہ نے کہاہے کہ خوشی کی بات یہ ہے کہ فیض احمد فیض آڈیٹوریم کی پہلی تقریب اقبال کے حوالے سے ہور رہی ہے ۔ یقینا فیض کی روح کو آج خوشی محسوس ہور ہی ہوگی کیونکہ فیض احمد فیض ، علامہ اقبال سے بہت عقیدت اور محبت رکھتے تھے۔وہ اکادمی ادبیا ت پاکستان میں قومی شاعر علامہ اقبال کے سلسلے میں 5روزہ افتتاحی تقریب سے مہمان ِ خصوصی کی حیثیت سے خطاب کر رہے تھے۔ افتتاحی اجلاس کی مجلس ِ صدار ت میں پروفیسر فتح محمد ملک(اسلام آباد)،جناب اسلم کمال(پنجاب) ، جناب یوسف شاہین(سندھ)، جناب یوسف گچکی(بلوچستان)،پروفیسر گوہر نوید(خیبر پختون خوا)اور سینیٹر ولید اقبال شامل تھے۔ شفقت محمود، وفاقی وزیر برائے تعلیم نے کہا کہ ان پانچوں دنوں میں اقبال کی فکر اور ان کے پیغام کے حوالے سے اہم پروگرام رکھے گئے ہیں جن میں نام ور ماہرین اقبال اور دانشوروں کی گفتگو اور شرکت سے نوجوان مستفیض ہوں گے۔ڈاکٹر انعا م الحق جاوید ، چیئرمین اکادمی ادبیات پاکستان نے ابتدائی کلمات ادا کرتے ہوئے کہا کہ اکادمی ادبیات پاکستان کی تاریخ میں فیض احمد فیض آڈیٹوریم میں منعقد ہونے والی یہ پہلی تقریب ہے۔ ا نہوں نے کہا کہ شفقت محمود، وفاقی زیر برائے تعلیم ، کا ممنوں ہوں کہ انہوں نے اپنی مصروفیات میں سے وقت نکالااور ان تقریبات کے سلسلے میں ہمیں رہنمائی فراہم کی۔ ڈاکٹر انعام الحق جاوید نے وفاقی سیکرٹری ، ڈاکٹر ندیم شفیق ملک کا بھی شکریہ ادکیااور کہا کہ ا ن کی مشاورت اور رہنمائی نے ہمارا حوصلہ بڑھایا۔نظامت محبوب ظفر نے کی۔ پروفیسر فتح محمد ملک نے کہا کہ اقبال کا کلام اور پیغام ہمارے لےے فکری ،علمی اور تہذیبی سرمایہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایران کے صدر اقبال کو اپنا شاعر مانتے ہیں۔ علامہ اقبال کے پوتے سینیٹر ولید اقبال نے کہا کہ اقبال کے ہاں سب سے زیادہ انسانی اتحاد ، انسانی مساوات اور انسان کی آزادی پر زور دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم پاکستان نے 9نومبر کو سکھوں کے لےے راہداری کھولی اس کی وجہ یہی تھی کہ علامہ اقبال نے بھی بابا گرونانک کے فلسفہ وحدت کے حوالے سے کئی نظمیں لکھیں۔ انہوں نے کہا کہ یقینا اس راہ داری کھلنے سے دونوں قوموں میں محبت اور رواداری کی فضا قائم ہوگی۔سینیٹر ولید اقبال نے کہا کہ آج اکادمی کے فیض احمد فیض آڈیٹوریم میں اقبال کے حوالے سے ان تقریبات کا انعقاد قابل فخر بات ہے ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ملک میں علم و ادب کو فروغ دیتے کے لےے کوشاںہے۔ مہمان خصوصی شفقت محمود، کو اکادمی ادبیات پاکستان کی شائع شدہ علامہ اقبال کی کتابوں کا سیٹ، بلوچستان سے تعلق رکھنے والے نامور دانشور یوسف گچکی نے مجلس صدار ت کے ارکان کی نمائندگی کرتے ہوئے پیش کیا۔ آخر میں لکی بُک ڈرا کے ذرےعے شفقت محمود، ڈاکٹر ندیم شفیق ملک اور سینیٹر ولید اقبال نے قرعے نکالے اور تین خوش نصیبوں کو 1000روپے مالیت کی کتب دینے کا مستحق قرار دیا گیا۔ اس تقریب میں راولپنڈی اسلام آباد اور گردونواح کے سینیئر اہل قلم ، شاعروں ، ادیبوں اور آرٹسٹوں نے شرکت کی۔ اس موقع پرعلامہ اقبال کے حوالے سے خطاطی اور پینٹنگز کی نمائش کا اہتمام کیا گیا ہے ۔ تقریبات میں بچوں کے حوالے سے مختلف پروگرام بھی پیش کیے گئے۔ اس موقع پر بُک فےئر کا بھی اہتما م کیا گیا جس میں علامہ اقبال پر کتابوں کو نمایاں طور پر رکھا گیا ہے اور ان پر 40فیصد رعایت دی جارہی ہے۔

Comments are closed.