اکادمی ادبیات پاکستان میں مالدیپ کے وفد کی پاکستانی ادیبوں سے ملاقات

اسلام آباد (پ۔ر) پاکستان اور مالدیپ برادرانا رشتوں میں منسلک ہے جنہیں ادب کے ذریعے مزید فروغ دیا جائے گا۔ ان خیالات کا اظہار اشرف علی ، صدر دیوھی لینگوئج اکیڈمی،مالدیپ نے اکادمی ادبیات پاکستان کے زیر اہتمام پاکستانی ادیبوں سے ملاقات کے موقع پر کیا۔سات رکنی وفد میں اشرف علی ،صدر دھوی لینگویج اکیڈمی ، نسیم احمد ڈائریکٹر جنرل ، شمع علی،، محمد فیضان احمد، اشرف عبد الرحیم ، احمد ندیم، آئی۔ ٹی کنسلٹنٹ اور انس محمدشامل ہیں۔ افتخار عارف، ڈاکٹر انعام الحق جاوید،ڈاکٹر راشد حمید ڈائریکٹر جنرل اکادمی ،ڈاکٹر عابد سیال،ڈاکٹر حمیرہ شہباز،محبوب بگٹی،شفیق انجم،حاکم علی برڑو،ڈاکٹر ظفر حسین ظفر اور دیگر اہل قلم نے گفتگو کی۔ اشرف علی، صدر، دیوھی لینگوئج اکیڈمی نے کہا کہ مالدیپ میں صرف دیوھی واحد زبان ہے ، ہم ایک قوم اور ایک زبان کے فارمولے پر عمل پیرا ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دیوھی لینگوئج اکیڈمی ، اکادمی ادبیا ت پاکستان کے ساتھ باہمی یاداشتوں (MOU )پر دستخط کرنے کی خواہش مند ہے۔ MOUکے بعد دونوں ممالک کے ادبی تراجم اور دونوں ممالک کے وفود کے تبادلوں پر کام کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ مالدیپ میں سہ ماہی’’ ادبیات‘‘ اور ’’پاکستانی لٹریچر‘‘ کا بہت شوق سے مطالعہ کرتے ہیں۔ 2016سے مالدیپ میں یوم اقبال منایا جاتا ہے اور اقبال کی بہت سی نظموں کے تراجم دیوھی زبان میں ہو چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دیوھی زبان کے بہت سے الفاظ اردو کی طرح ہیں اور محاورے بھی ملتے ہیں۔ دیوھی زبان کی ساخت کے لیے ثروت مند اردو زبان کے مواد کی ضرورت ہے۔ڈاکٹر راشد حمید ، ڈائریکٹر جنرل ، اکادمی نے کہا کہ پاکستان میںزبان پر کام ہورہا ہے۔ آئی ٹی کا دور ہے ، اس سلسلے میں ہمیں مزید محنت کی ضرورت ہے۔ اکادمی ادبیات اور دیوھی لینگوئج اکیڈمیادب کے تراجم پر کام کریں گے۔ افتخار عارف نے کہا کہ یہ بات خوش آئند ہے کہ ہمارے برادر اسلامی ملک مالدیپ میںشرع خواندگی 98فیصد ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میںزبان کے حوالے سے ایک ثروت مند روایت موجود ہے اور زبان کے گرائمر ، ماہر لسانیات اور یونیورسٹیوں میں سپیشلائزیشن کے کام ہورہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مالدیپ میں ادب لوک کہانیوں کی صورت میں موجود ہے اس ادب کو تحریری صورت میں لایا جا چاہیے ۔ مالدیپ کی شرع خواندگی تیزی سے آگے بڑھی ہے جس میں بہت سے مراحل رہ گئے ہیں، اس خلا کو پورا کرنے کی ضرورت ہے۔ ہم اپنے بردار مسلم ملک مالدیپ کو لسانی معاملات میں ہر قسم کا تعاون دینے کے لیے تیار ہیں۔ ڈاکٹر انعام الحق جاوید نے کہا کہ نیشنل بک فائونڈیشن نصابی کتب کے علاوہ بچوںاور دیگر کتب کی اشاعت میں مصروف ہے۔ پاکستان میں بہت سی زبانیں ہیں تمام زبانوں پر کسی نہ کسی صورت کام ہورہا ہے۔ قومی زبان کے حوالے سے بھی ایک مضبوط روایت ہے۔ ہمیں اس سلسلے میں مزید محنت اور تیزی لانے کی ضرورت ہے۔ مالدیپ کی دیوھی زبان اور اپنی قومی زبان کی باہم بہتری کے لیے باہمی مشاورت ضروری ہے۔

Islamabad (P.R): A seven member delegation of scholars, writers and intellectuals of Dhivehi Language Academy, Maldives, lead by Ashraf Ali, President of Dhivehi Language Academy visited Pakistan Academy of Letters (PAL) on Friday and discussed proposed Memorandum of Understanding (MoU) for promotion of language, literature of both countries through translation of literary books, holding of seminars and exchange of writer’s delegation to each other country. Delegation includes Ashraf Ali, President of Dhivehi Language Academy, Naseema Ahmed, Director General, Shahma Ali, Assistant Director (History), Mohamad Fauzan Ahmed, Assistant Director, Ashraf Abdul Raheem, Writer/Scholar, Ahmed Nadeem, IT Consultant and Anas Mohamed.
During the briefing on working and objectives of Dhivehi Language Academy, the leader of the delegation expressed his pleasure for warm welcome, given by the Director General PAL Dr. Rashid Hameed and officials of PAL. He briefed about history, transcript of Dhivehi Language. There is only one language in Maldives with a slight difference of dialect and this significance of the Dhivehi language is very helpful for its promotion, he added. He also informed the participants about the effort being made by their Academy and Government to develop the Dhivehi Language and its synchronization in line with modern information technology. He desired cooperation of concerned institutions and universities of Pakistan in this regard. He particularly mentioned the wide popularity and readership of PAL’s literary Urdu journal “Adbiyat” in Maldives.
The Pakistan Academy of Letters arranged a meeting/discussion with the language experts, writers and scholars including Iftikhar Arif, Director General National Language Promotion Department, Dr. Inamul Haq Javeid, Managing Director National Book Foundation, Dr. Rashid Hameed, Director General PAL and numbers of writers and scholars. The participants discussed about the understanding of Urdu language corpus and get benefited from the comprehensive corpus of Urdu language and various aspects of proposed agreement between Pakistan Academy of Letters and Dhivehi Language Authority (DLA) Maldives.
Speaking on the occasion, Iftikh arArif said that writers and scholars belong to the same family. He said that all the languages are same and anything being written in any language part of literature. He said that the first grammar of the world was from this part of world and we have rich and tremendous linguistic stock.
Dr. Inaam Ul Haq Javed, MD, National Book Foundation said that beside publishing of syllabus books, the NBF is also publishing books on different subjects and genre of literature. He expressed his satisfaction on pace of work regarding promotion of each language of Pakistan.
Director General PAL Dr. Rashid Hameed briefed the delegation about history, functions, objectives and achievements of PAL for promotion of literature and literary activities by PAL all over the country in all Pakistani languages. He said that an MoU between DLA and PAL would lead to further strengthen ties between two countries particularly in the field of literature of both the countries through translation, holding of seminars and exchange of writer’s delegation.

Comments are closed.