تقریب ’’اہل قلم سے ملیے‘‘کے تحت معروف شاعروادیب اختر عثمان کے ساتھ ملاقات

اسلام آباد (پ ر)اختر عثمان غزل، نظم اور خاص کر مرثیہ کے حوالے سے ایک خاص مقام رکھتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہارافتخارعارف نے اکادمی ادبیات پاکستان کے زیر اہتمام منعقدہ تقریب ’’اہل قلم سے ملیے‘‘ میں کیا۔وہ اس تقریب کی صدارت کر رہے تھے۔ممتازادیبوں نے پروگرام میں شرکت کی اوراختر عثمان سے ان کی فنی زندگی اور شخصیت کے حوالے سے گفتگو اور سوالات کیے۔ڈاکٹر راشد حمید، ڈائریکٹر جنرل اکادمی نے مہمانوں کا شکریہ ادا کیا۔ اختر عثمان نے کہا کہ بنیادی طور پر کلاسیکل شعرو ادب کا دلدادہ ہوں اور جدت پسندی سے کم ہی سروکار ہے۔ آج بھی میر، غالب، بیدل حافظ ، خیام اور انیس کو شوق سے پڑھتا ہوں اور اپنے معتبر شعراء سے ذہنی وابستگی رکھتا ہوں۔اختر عثمان نے کہا کہ میں 04اپریل1967 کو اسلام آباد میں پیدا ہوا، بچپن راولپنڈی میں گزاری ، سینٹ پال کیمبرج سکول سے میٹرک اور سیٹلائٹ ٹاؤن کالج ،راولپنڈی سے گریجویشن کی اور پنجاب یونیورسٹی سے ایم اے کیا۔ 1985ء میں فرسٹ ائیر کا طالب علم تھا تو احسان اکبر نے رہنمائی کی وہ حلقہ ارباب ذوق لے گئے اور کچھ عرصہ کے بعد حلقہ ارباب ذوق راولپنڈی کا سیکر ٹری جنرل بن گیا ۔ کم سن سیکر ٹری جنرل تھا۔ F.Aکے بعد شناختی کارڈ کے دفتر میں ملازمت کی ۔ 1997 میں میڈیکل گراونڈ پر میں ریٹائرڈ ہوا، مختلف اخبارات میں کام کیا اور ایڈیٹوریل انچارج بنا۔ ضیاء الدین نے ڈان اخبار کے لیے کالم لکھنے پر آمادہ کیا۔ ڈیلی ڈان،ڈیلی ابزرواور ٹیلی گراف میں کالم لکھے ۔ صحیح معنو ں میں 1985سے اُردو شعرو ادب پر کام شروع کیا۔ 1993ء میں شادی ہوئی ، دو بیٹے اور ایک بیٹی ہے۔ ادبی سفر میں جن لوگوں سے متاثر ہوا اور ان سے سیکھا اُن میں مظفر علی سید، ضیاء جالندھری ، افتخار عارف شامل ہیں جبکہ ڈاکٹر احسان اکبر اولین استاد ہیں۔افتخار عارف نے کہا کہ زبان پر قدرت اور دسترس ہی اچھی شاعری کیلئے ضروری نہیں بلکہ دل میں خاک اُڑانابھی ضروری ہے اور یہی سب کچھ اختر عثمان کی شاعری میں موجود ہے، اختر عثمان کی شاعری تخلیقی سطح پر ہمارے سامنے ہے۔ ’’تراش‘‘ جو ایک طویل نظم اور ایک خوبصورت اکائی کی صورت ہے جو بلاشبہ قابل ستائش ہے۔ ڈاکٹر راشد حمید، ڈائریکٹر جنرل اکادمی نے کہا کہ اکادمی ادبیات پاکستان کے پروگرام ’’ میٹ اے رائٹر اوور اے کپ آف ٹی ‘‘ سلسلے کی اڑتیسویں تقریب شاعر وادیب اختر عثمان کے اعزاز میں منعقد ہورہی ہے۔اکادمی آئندہ بھی ادبیوں اوردانشوروں کے ساتھ اس طر ح کی ملاقات کا اہتمام کرتی رہے گی۔انوار فطرت ، جہانگیر عمران، ارشد محمود، محبوب ظفر، رحمان حفیظ، حسن عباس رضا، سید جاوید رضا، منظر نقوی،صلاح الدین دوریش، روش ندیم، اور علی اکبر عباس نے گفتگو اور سوالات کیے۔آخر میں اختر عثمان نے کلام سنایا

Comments are closed.